الف لیلوی ہزار داستان

ہم کھیتوں میں پہاڑی ۔ٹیلے کی اوٹ میں رفع حاجت کرتے تھے۔
یا پھر جس جگہ "دیکھو گدھا کیا کر رہا ہے" لکھا ہوتا تھا وہاں پر "اطمینان " حاصل کرتے تھے۔
مٹی کا ڈھیلہ طہارت کیلئے استعمال کرتے تھے۔
یا زمین پر "گھسٹیاں" کرکے طہارت حاصل کرتے تھے۔
مغربی تہذیب نے ہمارے باورچی خانے کی بغل میں "پائیں خانہ" عطا فرما دیا۔
ادھر انواع و اقسام کے پکوان تیار ہوتے ہیں اور حکیمانہ پھکی "کارمینا" سے ہضم ہو کرباورچی خانے کی بغل کے "پائیں خانے" میں ایک گڑ گڑاہٹ سے غائب ہو جاتے ہیں۔
"لوٹا" ایجاد ہوا پھر پانی کی قلت کے حل کیلئے "ٹوائلٹ پیپر " ایجاد" ہوا اور آخر کا ر جاپانیوں نے "جدید" سائینس کے ذریعے "ٹٹی خانے" کے دنیا میں "انقلاب" پیدا کر دیا۔
باورچی خانے میں پکوان تیار کرکے طعام فرمائے، "پائیں خانے" میں تشریف لے جائیں۔ "مہک" کو غائب کرنے والی "مشین" کام کرے گی۔
آپ مطالعہ کیلئے کتاب ، انٹرنیٹ انجوائے کرنے کیلئے "ٹبلیٹ" یا "سمارٹ فون" لے کر جا سکتے ہیں۔
ایک پرسکون ٹھنڈی میٹھی سانس لینے کے بعد بٹن دبائیں، ایک غائبی ھاتھ لوٹا اٹھائے نمودار ہو گا۔
نفاست سے "دھلائی دھلائی" کرے گا۔ گرمیوں میں ٹھنڈی ہوا سے خشک کرے گا۔سردیوں میں گرم ہوا سے خشک کرے گا۔
لطف کی بات تو یہ ہے کہ جس "نشست" پر آپ "تشریف" رکھتے ہیں۔ یہ نشست گرمیوں میں فرحت بخش ٹھنڈی ہوتی ہے اور "سردیوں" میں "جذبات" تک کو گرما دینے والی "خوش کن نیم گرم" ہوتی ہے۔
"جدید سائینسی علوم "اور "مغربی تہذیب" کے مشکور ہونے کیلئے ہمارے لئے اتنا ہی کافی ہے۔
ہے نا "الف لیلوی ہزار داستان"؟؟
الف لیلوی ہزار داستان الف لیلوی ہزار داستان Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 8:27 AM Rating: 5

کوئی تبصرے نہیں:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.