گالیوں والا درویش اور توہین قرآن و حدیث۔ میلہ درویش5

فاروق درویش جہاں چھوٹے سے اختلاف پر مسلم اور غیرمسلم کی تمیز کیے بغیر ننگی گالیاں دیتا ہے وہیں پر یہ قرآن و حدیث کے حوالے سے نہایت عجیب حرکتیں کر رہا ہے۔
ایک تو یہ قرآن و حدیث کا حوالہ دیتا نہیں تھا۔ جب بلاگرز نے اسے شرم دلائی تو اس نے حوالے تو دیئے لیکن ساتھ گالیاں حسب سابق لکھ رہا ہے۔
اب اپنی جن تحریروں کو یہ مذہبی کہتا ہے۔ وہ ایسی ہیں کہ بات گالیوں سے شروع کرتا ہے پھر درمیان میں مذہب کی بات کرتا ہے اوربعد پھر گالیاں بکتا ہے اور ایسی پوسٹ کے نیچے کمنٹ میں نہایت فحش الفاظ استعمال کرتے ہوئے اختلاف رائے کرنے والوں کو گالیاں دیتا ہے۔
آپ خود فیصلہ کریں کہ کسی تحریر میں قرآن و حدیث سے پہلے اور بعد میں انتہائی گندی گالیاں کیا قرآن و حدیث کی توہین ہے یا نہیں۔
افسوس کا مقام ہے کہ اس کے جال میں کئی سادہ لوح مسلمان پھنس کر اس کی ہاں میں ہاں ملاتے ہوئے گالیوں پر اسلام کے نام پر واہ واہ کرتے ہیں۔ نہایت بازاری زبان استعمال کرنے والے فاروق نام نہاد درویش کے بلاگ پر ایسی تحریر بھی موجود ہے جس میں اس نے احادیث نبوی ﷺ کو اپنے مسخرے پن کے لئے استعمال کیا ہے۔ اپنی اس مزاحیہ تحریر میں اس نے احادیث کا حوالہ دے کر کئی مسلمانوں کا مذاق اڑایا ہے۔
پوسٹ اور کمنٹس میں مذہب کے نام پر دنیا کی انتہائی غلیظ ترین گالیاں اپنی ہی مختلف آئی ڈیز سے دیتا ہے۔
فرض کریں کہ یہ گالیاں دینے والی آئی ڈیز فاروق درویش کی نہیں تو پھر سوچنے والی بات یہ ہے کہ جب اس کی پوسٹ پر اس سے اختلاف کرنے والوں کو فحش گالیاں دی جاتی ہیں تو یہ ساری بیہودگی کو ختم کیوں نہیں کرتا۔ حالانکہ اپنے سے اختلاف کرنے والوں کے کمنٹ یہ بیشتر اوقات ختم کرتا رہتا ہے۔ اگر یہ گالیاں اپنی وال پر رہنے دیتا ہے تو اس کا صاف مطلب یہی ہے کہ یہ ان گالیوں کا حامی ہے۔!!
ہماری بھی تحریروں اور فیس بک وال پر کئی گندی ذہنیت کے لوگ گالیاں لکھ دیتے ہیں۔ بری زبان چاہے ہمارے مخالف کے لئے استعمال کی گئی ہو ہم وہ مٹا دیتے ہیں۔ اگر گالیاں لکھنے والا باز نہ آئے تو اسے بین کر دیتے ہیں۔ آخر اخلاقیات بھی کوئی چیز ہے۔
فاروق درویش ایسا نہیں کرتا۔ اس کی وال گندی گالیوں سے بھری پڑی ہے۔ بین کرنا تو دور وہ گالیاں نکالنے والوں کی حوصلہ افزائی کرتا ہے۔
اس کا تو صاف مطلب یہ ہے
فاروق درویش خود چاہتا ہے کہ اس کی مدح اور ستائش نہ کرنے والوں کو بیہودہ گالیاں دی جائیں۔ اس نے اپنی چرب زبانی سے انتہائی پست اور گندی ذہنیت کے لوگ محض اپنی مدح، ستائش اور خوشامد کے لئے اپنے اردگرد اکھٹے کر رکھے ہیں۔
آپ خود فیصلہ کریں
آیا نبی کریم ﷺ سے محبت کا دعوی کرنے والا کیا کوئی شخص اتنا گھٹیا ہو سکتا ہے؟
فاروق درویش اپنی چرب زبانی، دھونس اور دھمکیوں سے لوگوں کو دباتا ہے اور نبی کریم ﷺ سے محبت کا دعوی محض دھوکہ دینے کے لئے استعمال کر رہا ہے۔
ایسے مذہبی بہروپئے سے ہوشیار رہنا اور عوام الناس کو ہوشیار کرنا سب کا فرض ہے۔
فاروق درویش جو کئی مسلمانوں کو منافق، سائبر دہشت گرد اور ناجانے کیا کیا بنانے پر تُلا ہے۔ ہماری کوشش صرف اتنی ہے کہ اللہ کے آخری نبی محمد ﷺ کے نام کو کوئی بھی شخص اپنے مذموم مقاصد کے لئے استعمال نہ کر سکے اور اصلی ختم نبوت کاز کو نقصان نہ پہنچا سکے۔
سوچیں کوئی بھی باشعور انسان اختلاف کرنے والوں کو خود گالیاں دیتا ہے نہ دوسروں کو دینے دیتا ہے۔
سلجھے لوگ گالیوں کی بجائے حوالوں سے بحث کرتے ہیں۔ جبکہ فاروق درویش ثبوت کے ساتھ بحث کرنے کی بجائے دوسروں کو گالیاں دیتا ہے۔ چھوٹے سے اختلاف پر گندی بازاری زبان استعمال کرتے ہوئے دوسرے کو قادیانی نواز، یہودیوں کا ایجنٹ اور ناجانے کیا کیا بنا دیتا ہے۔ اور جب اس سے کہا جائے کہ ثبوت دو تو گالیاں دیتے ہوئے ادھر ادھر کی ہانکنے لگتا ہے۔
فاروق نام نہاد درویش اس حد تک گر چکا ہے اور اتنا بازاری قسم کا انسان ہے کہ اسے چھوٹی موٹی گالی اب گالی لگتی ہی نہیں۔
جب کئی سمجھدار شریف لوگ اسے کہتے ہیں کہ گالیاں نہ دو تو آگے سے کہتا ہے کہ بتاؤ میں نے کونسی گالی دی۔ میں تو بس ان کی صفات بتا رہا ہوں حالانکہ اس کی زبان ہر وقت ایک طوفان بدتمیزی چلاتی رہتی ہے
معلوم نہیں فاروق نام نہاد درویش نے کس محلے میں پرورش پائی ہے ورنہ اسے پتہ ہوتا کہ ہمارے معاشرے کی اخلاقیات اتنی زیادہ ہیں کہ یہاں کسی کو کتا کہنا بھی گالی ہے۔ مگر فاروق درویش صرف کتے جیسی گالی پر نہیں رہتا بلکہ بہت آگے نکل کر ننگی گالیاں دیتا ہے۔
آپ خود سوچیں یہ گالیاں دے کر کونسے مذہب کی تبلیغ کر رہا ہے۔
فاروق درویش اور اس کے ہمنواؤں کی گالیوں کے چند نمونے اسکرین شاٹ میں خود دیکھ لیں۔ ہم نے ابھی بہت کچھ سنسر کر دیا ہے۔ پھر بھی اس نام نہاد درویش کی زبان دیکھ لیں۔ یہ صرف چند نمونے ہیں جبکہ ایسی اور اس سے بھی غلیظ گالیوں کی پٹاری فاروق درویش کھولے بیٹھا ہے
فاروق درویش کی گالیاں
گالیوں والا درویش اور توہین قرآن و حدیث۔ میلہ درویش5 گالیوں والا درویش اور توہین قرآن و حدیث۔ میلہ درویش5 Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 10:32 PM Rating: 5

8 تبصرے:

علی کہا...

اللہ رحم کرے

محمد بلال خان کہا...

درویش صاحب کو کنٹینر کے اندر بند کرکے دریا میں پھینک دیا جائے۔ اور ہمیں انسانیت کا احساس ہے تو لہذا اندر آکسیجن بھی دی جائے اور ایک لیپ ٹاپ ایوو کے سمیت۔

بلال امتیاز احمد کہا...

دانیال اکبر نامی آئی ڈی کا جائزہ لینے کے بعد محسوس یہ ہوتا ہے کہ یہ آئی ڈی جعلی ہے اور بہت ممکن ہے کہ بابا چریے کے ذیر استعمال ہو، ،
وجوہات انداز تحریر میں مماثلت اورایک اہم بات یہ کہ دوہزار بارہ میں بننے والی اس آئی ڈی کی ٹائم لائن پر صرف چریے بابے کے بلاگ کے لنکس کے علاوہ کچھ پوسٹ نہیں کیا گیا،، ایسی پروفائلز عموما جعلی ہوا کرتی ہیں۔

ویسے ایک سوال تھا جاپانی صاحب کیا گالیاں دیتے وقت مسلمان اور غیر مسلم کی تمیز کرنی چاہیئے؟؟

افتخار راجہ کہا...

یہ سارے بٹ ان دنوں ان ایکشن ہیں،
خیر ہے مرچیں زیادہ تو نہیں کھا گئے، یہ بٹ جی تو خیر سے چوبیس گھنٹے 12 بجائے رکھتے ہین

جواد احمد خان کہا...

کھوتے کی زبان دانی یہاں ہی کیوں نظر آتی ہے ۔ یہ مضمون انشا اللہ اسکا تابوت ثابت ہوگا۔ انٹرنیٹ پر عام کرنے کی ضرورت ہے۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

ہاں جی یہ تمیز رکھنا فرض ہے۔
اگر مغلظات بکنے کی عادت ہو تو۔۔
باقی دین کامل میں گالی دینا برا بتایا گیا ہے۔
اور دیگر نشانیوں کی طرح گالی دینا بھی منافقت کی نشانیوں میں سے ایک ہے :D

طریقہ واردات اور بغیر ثبوت سنگین الزامات۔ میلہ درویش6 | عام بندے کا حال دل کہا...

[…] ← پچھلا […]

عطا راشد کہا...

اسکو انسان کہنا انسانیت کی توہین ہے مگر فاروق جیسے لوگوں کی حوصلہ افزایی ہمارے معاشرے کے لوگ ہی کرتے ہیں جو گالیوں اور نفرت کو پسند کرتے ہیں اس لیے یہ اکیلا قصوروار نہیں

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.