ٹی وی




پچیس چھبیس سال پہلے جب ہم جاپان پر نازل ہوئے تھے تو پاکستا ن میں ایک ٹی وی چینل ہوتا تھا۔جس کی نشریات شاید رات نو بجے اختتام ہو جاتی تھیں۔کیونکہ ہمارا تعلق اس طبقے سے تھا جو کہ کسی کے گھر یا کسی ہوٹل پر ٹی وی سے کافی دور رہ کر ہی ٹی وی کو دیکھنے کی "عزت" بخش سکتے تھے۔جیسے "بشرف نگاہ" ٹائپ کی شے ہوتی ہے۔ "باہر" کی کمائی جب حاصل ہوئی تو ہم پاکستان گئے ،خواہش تو تھی ہی کہ ہمارے "کہار" میں بھی ٹی وی ہ...و۔تو ایک عدد ریموٹ کنٹرول آلا رنگین ٹی وی خرید کر کہار میں رکھ لیا۔
گھر والے بھی خوشی سے پھول کر گول گپے ہو رہے تھے اور ہر آنے جانے والے کو بتا رہے تھے کہ "ٹچ" یہاں سے کرو تو "شوں" کرکے وہاں پر ٹی وی چل پڑتا ہے۔ جن کے پاس ٹی وی پہلے سے ہی تھا دل رکھنے کیلئے "زیر زبر پیشِ لب " مسکرا کر سب کی خوشی میں شامل ہو رہے تھے۔۔پیارا دور تھا جی۔۔۔۔اب تو عجب "حرامیوں" سے پٹا پڑا ہے کہ خدا غارت کرے ان دیوثوں کو کہ مذہب اور سیاست کے نام پر عام سادے مسلمانوں کو عجیب "کنفیوژن" کا شکار کرکے دلوں میں بغض و عناد کا بیچ بو کر "مالی مفاد" حاصل کرتے ہیں۔محلے گاؤں شہر ملک کا معاشرہ ہر چھوٹے بڑے لیول پر انتشار کا شکا ر اور ذہنی بیمار ہوا جاتا ہے۔ گھر والوں کو "ٹی وی کی بتیوں" کے سامنے لگا کر ہم جاپان آکر مزدوری میں جت گئے اور روزانہ رنگ برنگی جاپانی "چینل" دیکھ کر تھکاوٹ دور کرتے تھے۔۔
کہ بار بارکی طرح ایک بار پاکستان فون کرکے حال احوال پوچھا تو ۔۔۔۔۔۔۔انتہائی درد ناک خبر ملی۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔کہ ہماری پیر مولانا ٹی وی صاحب شہید کر دیئے گئے ہیں۔
ہمارے چھوٹے بھائی جسے ہم ننھا سا چھوڑ کر آئے تھے۔۔اس نے ٹی وی کو چوک میں رکھ کر "کلا شن کوپ" سے انتہائی بے دردی سے مار دیا ،کہ یہ شیطان ہے۔اور اماں جی شیطان کو ریشمی غلافوں میں لپیٹ کر انتائی عزت و تکریم سے گھر میں سجا کر رکھتی ہیں۔ ساتھ میں لوگوں کو بھی دعوت دی کہ اس شیطان کو گھر سے باہر نکال دو۔۔ورنہ تباہ و برباد ہو جاؤ گے۔۔وہ ہی طالبانی بکواس.
جنابو۔۔۔۔جاہل لوگ۔۔ بس اس دن کے بعد ہمارے گھر میں ٹی وی ابھی تک نہیں ہے۔۔میں جاپان میں موجاں ضرور کرتا ہوں۔ کافی سارے رنگی برنگی چینل ہیں جی۔۔۔۔ جو دل کرے "ٹچ" کرکے "شوں" دیکھ لیتا ہوں۔ تو جنابو۔۔جب ٹی وی کی شہادت کے بعد پاکستان گیا تو چھوٹے بھائی کو سامنے بیٹھا کر لیکچر دیا۔۔ظاہر ہے ہمارا لیکچربھی اتنا ہی "علمی" ہوتا ہے، جتنا اپنے اندر"علم" بھرا ہواہے۔ بیچارا چھوٹا بھائی خاموشی سے سنتا رہا۔۔ اور جب آخر میں ہم نے کہا گھر میں نہیں رکھنا تھا تو بیچ دیتے نا۔۔ کچھ پیسے واپس ہی آجاتے ۔۔۔بھائی کچھ دیر خاموش رہا اور اپنی عزت کا خیال رکھتے ہوئے ۔۔دروازے تک جاکر بولا۔۔ اپنے گھر کا شیطان لوگوں کو بیچ کر پیسے کھرے کرنا ہی تو بیغیرتی و بے حیائی  ہوتی ہے۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ بی وقوف ،جاہل ، طالبان۔۔۔۔۔۔ ڈی   یی یی  لگے دم چلے غم دے دمادم۔



ٹی وی ٹی وی Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 8:31 PM Rating: 5

کوئی تبصرے نہیں:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.