بتوں سے امیدیں

ملکہ محل کی بالکونی سے کیڑے مکوڑوں کو ذلت کی انتہا میں بھوک سے بلبلاتے دیکھ  کربولی تھی۔

اگر ان کیڑے مکوڑوں کو روٹی نہیں ملتی  تو یہ کیک کیوں نہیں کھاتے!

اعلی حضرت کو جب قبیلے کا سردار بننا نصیب ہوا تو۔۔۔۔۔۔۔۔۔

وعدے وعید پر لعنت بھیج کو بولا تھا۔۔

مسلمان کی زبان قرآن و حدیث نہیں ہوتی۔۔

قول قرار کی پختگی تو اہل جہنم کی میراث ہوتی ہو گی( اللہ معافی)

سردار کا چیلا طنزیہ مسکراہٹ سے بولا۔۔۔۔

جس  کی جان و مال ، عزت و عصمت محفوظ نہیں وہ کفار کی پناہ  میں چلے کیوں نہیں جاتے!!

انہیں کس نے روکا ہے؟۔۔۔( کہنے میں کوئی ڈر نہیں ۔۔۔۔۔کفار کے ساتھ رہ کرایمان تک محفوظ ہے)

ان کے باپ دادا اللہ کے انتہائی محبوب اور نیک مسلمان تھے کہ

ان باپ دادا کی قبر کی مجاوری کرکے کیڑے مکوڑوں سے تاوان وصول کرکے برانڈڈ سوٹ اور ٹائیاں پہنی جاتی ہیں!

کرپشن نہیں تو ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔باپ دادا کی قبر پرستی کروانے کے علاوہ کوئی کاروبار ہے؟(انگریز کی اطاعت کرنے کا انعام جاگیر تو ہو گی )

کیڑے مکوڑے۔۔۔۔۔۔حشرات العرض۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اللہ کو چھوڑ کر شخصیت پرستی کریں گے تو ۔۔۔۔کیا حال ایسا نا ہو گا؟

مذہب کے نام پر بیوقوف بنا دیئے جاتے ہیں تو۔۔۔

کسی سیاسی فرد کی شخصیت پرستی میں دیوانے ہوئے جاتے ہیں۔

کسی سیاسی لیڈر پر تنقید کردو تو ایسی جگہ لے  جاکر ماریں گے کہ پانی بھی نا ملے۔۔۔

مذہب پرستی ۔۔۔۔

تیرے سوا سب کافر اس کا مطلب کیا

سر پھرا دے انساں کا ایسا خبط ِمذہب کیا(میر)

کیسی امید یں ۔۔کیسا مستقبل۔۔۔

خدا سے نا امید ی ۔۔بتوں سے امیدیں۔
بتوں سے امیدیں بتوں سے امیدیں Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 11:12 AM Rating: 5

3 تبصرے:

افتخار اجمل بھوپال کہا...

بتوں سے تجھ کو امیدیں خدا سے نا امیدی
بتا تو سہی اور آزری کیا ہے

ali کہا...

ایسی بھی کیا نو امیدی حضور ، ابھی تو جمہوریت کو پانچ سال ہوئے ہیں زرا جمہوریت کا بوٹا پنپنے تو دیں ایک موقع پی پی اور ایک موقع نون کو اور دیں پھر یہ آپکی جان چھوڑ دیں گے آخر شہزادے بھی تو بادشاہ بنیں گے۔
اچھی سے اچھی آمریت بری سے بری جمہوریت سے بری ہے۔چاہے ملک رہے یا نہ رہے عوام رہیں یا نہ رہیں جمہوریت رہنی چاہیے
آپکے بلاگ نے نجھے بھی غصہ دلا دیا۔ جائو نہیں پڑھتے آپکا بلاگ

عمران ارشد کہا...

اس کے پیچھے سارا شہر ہے پتھر لے کر
اک پاگل نے سب کو پاگل کر رکھا ہے

سمجھ تو آپ گئے ہوں گے.

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.