گپ شپ کیفے ڈی بکواس

سنا ہے کہ مرد بیمار دبئی سے ولایت جارہا ہے، پرانے روٹ پر چلے گی پھر یہ گاڑی کیا؟؟(راجہ جی دی کھپ)

یعنی ولائیتیوں کا ولی ہونے جا رہا ہے۔۔۔

 

سورس؟

آخر کو یہ لوگ ہیں تو انہیں کے وائسرائے ہی، جا سکتےہیں

سورس یہ ہے کہ ڈاکٹر شیدا صبح کسی پروگرام میں اندازہ لگا رہا تھا

چلو جی۔۔۔ شیدا اور اسکی لمبی لمبی۔۔۔ کوئی ایک درست ہو جائے تو رولا پا دیو "دیکھا میں نے پہلے ہی کہا تھا ۔۔۔۔

وہ تو ٹھیک ہے پر یار اس میں مجھے کچھ انہونی بات نظر وی نہیں آئی۔

ابھی بیچارے نے پورا انتقام بھی نہیں لیا تھا۔۔۔۔چچ چچ چچ

کس سے انتقام لینا تھا جی پورا اس کنجر نے

پاکستان کی بھوکی ننگی عوام سے

ہاں یہ تو پہڑی گل ہے جی، اسکو ابھی موقع ملنا چاہئے تھا

شیدا کون؟

شیدا مراثی ؛ڈڈ

خدا دا واسطہ اے دس دیو مینوں۔۔۔۔(ڈاکٹر ساب کا ترلا)

چلو دس دو راجہ

یار یہ پنڈی کا ڈاکٹر ہے ادھر لال حویلی میں پریکٹس کرتا ہے کسی زمانے میں پتھو پیتھک کا ماہر تھا ابھی رولا اشپیشلسٹ ہے

شیدا کون؟

جاگو مولبی ساب۔   (مولبی ساب اللہ کے شوگر گذار بندے ہیں عموماً انسولین کے نشے میں رہتے ہیں)

اچھا وہ ریلوے والا؟

جی اوہو ہی ہے

سابق وزیر ریلوے و ریما، سنا ہے ریما نے ادھر امریکہ میں کسی نال ویا رچا لیا ہے۔

کوئی مل ہی گیا ہوگا۔۔۔

اگر یہ شیدے سے سنا ہے تو بے چارے کی پیشن گوئی پوری ہونے کے بعد آئی ہے۔۔

نہیں ادھر کوئی اپنا بندہ بیان فرمارہا تھا۔

اس چوول والی بات ادھر ہی رہ گئی، کسی کو اس دورہ لنڈن کے بارے میں مزید علم ہوتو؟؟

نو آئیڈیا سر جی

انتقام اور کیا لے گا؟

 قوم کا ہر چلنے والا پہئہ جام پڑا وا آج۔۔۔)ڈفر تپ کے)

چلو جی یاسر آپ بتاؤ اور کیا اتنقام ہوسکتا ہے؟؟ ویسے میرے خیال میں جب تک ملک باقی ہے اس خاندان کا انتقام پورا نہیں ہوگا پاکستان سے

ابھی ٹانگے اور ریڑھے کا  پیہہ  قابل استعمال ہے

مطلب کھوتا اور گھوڑا بھی قابل استعمال ہے؟

اب شریفے کے بچے بھی مارکیٹ میں  آگئے ہیں۔۔۔اپنے کاکوں کو سنبھالو جی

خاندان تو ختم ہو گیا۔ اب تو خاندان کے سُسرالیوں کا انتقام شروع ہو گیا ہے۔

 

فرعون کا خاندان کبھی ختم نہیں ہوا ہاں فرعون ختم ہوئے ہیں جی، یہ اسی پٹڑی کے مسافر ہیں سارے

جیسے بلاول زرداری کے آباؤ اجداد اچانک بھٹو میں تبدیل ہوگئے اور زرداری کو پتا ہی نہیں چلا

یعنی عوام صدیوں سے ان کے انتقام کا نشانہ بنتے آئے اور بنتے رہیں گے؟

 


تو اور کیا جی، پانی ہمیشہ نیچلی طرف ہی آتا ہے، پس نیچے والے بھگتیں یاں اوپر چلے جائیں

یعنی تر جاو نہیں تو ڈب جاو

نہیں جی چڑھجاؤ نہیں تو رڑھ جاؤ گے،

بلکہ پاکستانی قوم کےلئے ہونا چاہئے چڑھ جاؤ نہیں تو وڑھ جاؤ گے

ہور چوپو۔۔۔(استاذ جی دانت کچکچا کے)
گپ شپ کیفے ڈی بکواس گپ شپ کیفے ڈی بکواس Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 10:29 AM Rating: 5

7 تبصرے:

عبدالقدوس کہا...

ہور چوپو

منیر عباسی کہا...

آپ بھی کاپی پیسٹنے لگے، ہیں جی؟

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

چوپو جی چوپو۔۔۔امبھ ہیں

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

ڈاکٹر ساب میں نے تو کیفے میں ہونے والی گفتگو سے جنم لیا گیا ادب سب کو سکھا رہا ہوں۔
کاپی پیسٹ تھوڑی ہے ۔۔یہ تو نیکی ہے۔ٓڈ

ڈفر - DuFFeR کہا...

لول ز :D:

درویش خُراسانی کہا...

یاسر بھائی اتنا گاڑا ادب۔
تارکول سے بھی زیادہ گاڑا ہے۔

dr Iftikhar Raja کہا...

یہ تو سب دلوں کے چھالے پھپھول رہے تھے، اگر آپ مسیت میں اسپیکر پر بھی یہ سارا ماجرہ اعلان کروادیں تومیرا نہیں خیال کہ کسی کے کان پر جوں بھی رینگے گی۔

ہاں اگر کوئی کان کھرک دے تو الگ بات ہے

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.