اٹھارہ کروڑ در شاباش










لاہور

لاہور میں فائرنگ کر کے دو پاکستانی نوجوانوں کو ہلاک کرنے والے امریکی ملزم ریمنڈ ڈیوس کو مقامی عدالت نے بری کر دیا،وزیر قانون پنجاب رانا ثنااللہ نے ریمنڈ ڈیوس کی رہائی کی تصدیق کرتے ہوئے بتایا کہ مقتولین کے ورثا کی طرف سے ملزم کو معاف کرنے کے بعد اسے رہا کیا گیا۔ملزم ریمنڈ ڈیوس نے ڈیڑھ ماہ قبل27 جنوری کو لاہور کے مزنگ چوک میں دو افراد فیضان اور فہیم کو فائرنگ کرکے ہلاک کر دیا تھا،واقعے کے بعد اسے مقامی پولیس نے گرفتار کر کے مقدمہ درج کر لیا تھا،ابتدائی طور پر یہ کیس مقامی عدالت میں چلا تاہم اس پر وفاقی اور صوبائی حکومتوں کے رویے امریکی دباؤ اور عوامی ردعمل کے بعد حساس نوعیت اختیار کرنے پر اس کی سماعت سنٹرل جیل لاہور میں کی جاتی رہی۔کیس کی سماعت کے دوران سفارتی اسثنا سمیت کئی قانونی معاملات زیربحث اور زیرغور آتے رہے اور مختلف نوعیت کے نشیب و فراز کے بعد بالآخر آج اسے رہائی مل گئی،مقتولین کے ورثا کے وکیل اسد منظور بٹ نے الزام عائد کیا کہ آج سنٹرل جیل میں کیس کی سماعت تھی،سماعت سے قبل فیضان اور فہیم کے ورثا کو گھروں سے اٹھا کر عدالت میں لایا گیا ،وکلا کو بھی گن پوائنٹ پر روکا گیا اور کوئی بات میڈیا کو بتانے کی صورت میں دھمکیاں دی گئیں۔وکیل کے مطابق ورثا سے زبردستی دیت کے کاغذات پر دستخط کرائے گئے ،جس کے بعد پہلے امریکی قونصلیٹ کی چار گاڑیاں روانہ ہوئیں اور بعد میں وکلا کو نکلنے کی اجازت دی گئی۔پنجاب کے وزیر قانون رانا ثنااللہ نے امریکی ملزم ریمنڈ ڈیوس کو بری کیے جانے کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ عدالت نے ساری کارروائی قانون کے مطابق انجام دی،عدالت میں پہلے ملزم پر فردجرم عائد ہوئی،جس کے بعد ورثا بھی عدالت میں پیش ہوئے ،جن کی طرف سے دیت کے کاغذات پیش کیے گئے،رانا ثنااللہ کا کہنا تھا کہ دیت کے معاملے سے حکومت پنجاب کا کوئی تعلق نہیں ،عدالت کو ملزم کو معاف کرنے کا حق ہے ،حکومت یا پراسیکیوٹر اس میں کوئی رکاوٹ نہیں ڈال سکتے۔

اٹھارہ کروڑ کی بے غیرت قوم کو در شاباش۔۔۔اس قوم کو نسلی ، لسانی ، مسلکی جنگ سے فرصت نہیں ہے۔یہ قوم اب بھی نہیں اٹھے گی۔۔۔در شاباش

بشکریہ جنگ
اٹھارہ کروڑ در شاباش اٹھارہ کروڑ در شاباش Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 10:51 PM Rating: 5

24 تبصرے:

افتخار اجمل بھوپال کہا...

جنگ کی خبر نامکمل ہے ۔ جنگ گروپ کا ہی جيو ٹی وی ہے جس نے پہلے تو يہی کچھ بتايا تھا جو جنگ ميں لکھا ہے مگر بعد ميں ساری تفصيلات بتائی ہيں جو مختصر طور پر يہ ہے
امريکی ريمنڈ ايلن ڈيوس پر دو پاکستانيوں کے قتل کی فرد جُرم عائد کی گئی
ناجائز اسلحہ رکھنے کے جرم پر جتنی مدت [48 دن] قيد ميں گذار چکا ہے کے ساتھ 30000 روپيہ جرمانہ کيا گيا
مقتولين کے [18] ورثاء نے جج کے سامنے ديت وصول کی جس کے متعلق پہلی خبر تھی کہ 6 کروڑ روپے ہے مگر بعد ميں سابق اٹارنی جنرل [زرداری کا بندہ] جو اس سلسلہ ميں خصوصی طور پر کام کر رہا تھا نے بتايا کہ 20 کروڑ روپے ديت مقتولين کے ورثاء نے جج کے سامنے وصول کی اور صلح نامہ پيش کيا

مزيد وضاحت کيلئے ايک دن انتظار کرنا پڑے گا ۔

پاکستان ميں پچھلے کم از کم 10 سال ميں يہ پہلا امريکی ہے جسے جرم کے بعد گرفتار کيا گيا ۔ قيد ميں رکھا گيا ۔ اس پر مقدمہ چلايا گيا اور اُس پر فرد جرم عائد کی گئی اور اسے قبول کرتے ہوئے امريکی نے ديت اور جرمانہ ادا کيا
اس سے قبل اسلام آباد ميں موجودہ حکومت کے دور ميں کئی بار امريکيوں کو قانون کی کھلم کھلا خلاف ورزی پر پوليس نے روکا مگر اُوپر سے ٹيليفون آنے پر چھوڑ ديا

بلاامتیاز کہا...

آپ لوگ کسی حال میں خوش ہی نہیں ہوتے۔۔
اب جو اسلامی نظام نافظ ہونے لگا ہے تو آپ لوگوں کو پھر بخار چڑھ رہا ہے
آپ لوگ چاہتے ہی نہیں کہ اس ملک میں اسلامی نظام قائم ہو۔۔
ریمنڈ ڈیوس کو دیت کے تحت رہائی ملی ہے جو خالص اسلامی قانون ہے۔۔
پہلی بار اتنی بڑی سطح پر ملک میں ایک اسلامی قانون کے تحت فیصلہ کیا گیا اور آپ لوگوں سے ہضم نہیں ہو رہا
جو اس فیصلے کو نہیں مانتا وہ دیت کو نہیں مانتا اور جو دیت کو نہیں مانتا وہ اسلام کو نہیں مانتا
میرا زاتی تازہ فتوی ۔۔۔۔

جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین کہا...

ریمنڈ ڈیوس رہا کر دیا گیا۔ پاکستان کے اصل حکمرانوں کے ساتھ پاکستان وفاق اور پنجاب کے حکمرانوں کا چہرہ بھی عیاں ہوگیا ہے کہ وہ اپنے اقتدار کے لئیے کسی بھی حد تک جاسکتے ہیں۔ اگر یہ بکاؤ مال پہلے ہی سے دانی چُگ کر بک نہ چکا ہوتا تو انکے لئیے آسان بہانہ تھا کہ ہم الیکشن کروا دیتے ہیں کہ نئی حکومت ریمنڈ ڈیوس کا فیصلہ کر لے گی۔ مگر۔ ۔ ۔

سب سے پہلے تو پاکستان کے بادشاہوں کو در شاباش ۔۔ پیپلز پارٹی اور مسلم لیگ کو سوا در شاباش حسب حصہ اور اور بے حسی پہ سب حکمرانوں سیاستدانوں ، آئے روز انقلاب انقلاب کی ڈگڈگی بجانے والوں کو سوا درشاباش، لسانی مسلکی اور ذاتی مفادات کی خاطر ملک و قوم کو ٹکٹکی پہ چڑھانے والوں کو ڈیڑھ در شاباش۔ ملک میں الکیشن جیتنے کا دوعواہ کرنے والے اور عوام کو پانی بجلی گیس آٹا چاول چینی کی دائمی محتاجی بخش کر قوم کا دیوالیہ نکالنے والوں کو پونی دو در شاباش اور جمہوریت کا دعواہ کر کے حکومت بنانے والے جنہوں نے سابق آمر مشرف اور اسکی سابقہ حکومت کے سیاستدانوں کا مشرف کا ساتھ دینے اور آئین پاکستان سے غداری پہ مقدمات نہ بنانے ، ننگ ملت مشرف کے امریکہ کے دور میں قومی خودمختاری کے خلاف معائدے کرنے والوں کو ٹکٹکی پہ نہ چڑھانے والوں کو دوہری شاباش۔ یہ مقدمات قائم نہ کرنے اور وفاق میں پیپلز پارٹی اور صوبوں میں نون لیگ اے این پی ایم کیو ایم وغیرہ کو محض اپنے اقتدار کی خاطر امریکہ سے ننگ وطن مشرف کے دور کے معائدے منسوخ کرنے کا فیصلہ و مطالبہ نہ کرنے کی وجہ سے آج پاکستانی قوم کا سر جھک گیا۔ ابھی تو ہمیں پتہ نہیں کیا کچھ دیکھنا ہے۔

میرا ایک سوال ہے کیا موجودہ حکومت کے دور میں اور ننگ ملت مشرف کے ننگ دور میں کوئی فرق ہے؟۔ امریکہ کے سامنے اس حد تک جھکنے سے آخر ملک و قوم کو کیا ملا ؟ انکے مسائل میں سو فیصد اضافہ ہوا ہے تو پھر وہ کونسی مجبوریاں ہیں جو پاکستان میں بر سر اقتدار پارٹی پیپلز پارٹی پنجاب میں حکمران نون لیگ۔ اور اقتدار نامی کیک سے اپنے حصہ کاٹتنے والے اییم کیو ایم اور پی این اے کی آخر وہ کونسی مجبوری ہے جو انہیں امریکہ کے در آستانہ پہ جبین بہ سجدہ کئیے ہوئے ہے نہ صرف حکمرانوں کو امریکہ کے در پہ سوالی بھک منگا اور سر بہ سجدہ کئیے ہوئے ہے بلکہ پوری قوم کے وقار کو امریکہ کے ایک اشارے پہ ذلیل کرنے پہ ہمہ وقت تیار ہیں۔ آخر کونسی مجبوری ہے؟ محض انکا اپنے اور اپنے خاندانوں کے لئیے اقتدار۔

اب پوری قوم کا یہ جائز حق بنتا ہے کہ وہ نہ صرف ایسے حکمرانوں اور لسنانی ، سیاسی ، مسلکی ، پنڈتوں سے جان چھڑوا لیں بلکہ ایک ایسی حکومت بنائیں۔ ایسے لوگ سامنے لائیں جو سوائے اللہ کے کسی سے نہ ڈرتے ہوں ۔جو ملک و قوم کا وقار بحال کرنے کےساتھ ساتھ ان سب پنڈتوں کو آئین پاکستان کے تقاضوں کے تحت ان کو قرارا واقعی سزائیں دے تانکہ آئندہ پاکستان کے وجود کو قسم قسم کی جونکوں سے ہمیشہ کے لئیے نجات دلائی جاسکے۔ اور اگر قوم یوں نہیں کرتی تو ساری قوم کو تہری در شاباش

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

ھالا جی،،،۔۔۔شاہ جی صاحب۔۔۔۔۔۔یہ بھی بڑے پائے کافتوی ہے۔۔ :mrgreen:

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

گوندل صاحب یہ تبصرہ فیس بک پر پھینک رہا ہوں

نادیہ علی کہا...

ریمنڈ ڈیوس تو بچ کر نکل گیا ، اب احتجاج ہوگا.
اور اس میں کیا کیا نہیں ہوگا. http://bit.ly/i7RDzq

منیر عباسی کہا...

شاہ جی، اس معاملے میں اسلامی قانون قصاص کا بھی تو ہے نا۔ اللہ تعالی نے ہی تو فرمایا ہے کہ

و لکم فی القصاص حیواۃ یا اولی الالباب۔
اور تمھارے لئے قصاص میں زندگی ہے اے سوچنے سمجھنے والو۔

وہ کدھر گیا؟ اس قانون کو نظر انداز کیوں کیا گیا؟

قرآن میں شائد ہارے جیسے ہی لوگوں کا ذکر کر کے فرمایا گیا ہے کہ

افتومنون ببعض الکتاب و تکفرون ببعض۔۔۔
کیا تم لوگ کتاب کے کچھ حصے پر ایمان لاتے ہو اور کچھ کا انکار کرتے ہو؟ ۔۔۔ ( پوری آیت یاد نہیں )

محمد سعید پالن پوری کہا...

بہت دیر تک سوچتا رہا کیا لکھوں؟خیالات ذہن میں آءے، لکھا بھی، پر ہر بار ڈیلیٹ کر دیا،عقل و خرد مفلوج ہیں، غم،غصہ اور لاچاری تینوں انتہاءی نقطہ پر ہیں، خیالات بے رچط ہیں آپ چاہیں تو اس تبصرہ کو مٹا سکتے ہیں

حضور پاک ﷺ کا ارشاد ہے:لوگوں پر ایک دور ایسا آءے گا کہ مومن بندہ مسلمانوں کی
جماعت کی لیے دعا کرے گا مگر وہ مقبول نہیں ہوگی، اللہ تعالی فرماءیں گے تو اپنی ذات کیلیے اور اپنی پیش آمدہ ضروریت کیلیے دعا کر میں قبول کرونگا لیکن عام لوگوں کے حق میں قبول نہیں کروں گا اس لیے کہ انہوں نے مجھے ناراض کردیا ہے

مسند الفردوس

حجاب کہا...

نہ ہی کوئی رقم ادا کی گئی ہے نہ ورثاء کو کچھ پتہ ہے ۔۔

عمران اقبال کہا...

سائیں۔۔۔ جاوید صاحب اور محمد سعید صاحب کے تبصروں کے بعد کچھ کہنے کو نہیں رہنا جاتا۔۔۔ بس میں یہ جانتا ہوں۔۔۔ کہ شرمندگی کا احساس بہت زیادہ ہو رہا ہے۔۔۔ کچھ روٹین سے زیادہ ہی۔۔۔

اللہ جاپان میں آپکی حفاظت کرے۔۔۔ آمین۔۔۔

حجاب کہا...

میں نے ایف ایم کی نیوز میں فہیم کی سالی صاحبہ کو بولتے سنا تھا تو وہی لکھا ۔۔ باقی نہیں پتہ کیا سچ کیا جھوٹ ۔۔ میرے پیچھے کوئی نہ پڑجائے ۔۔ میں جواب دینے نہیں آؤں گی ۔۔۔ :oops:

fikrepakistan کہا...

جاوید گوندل صاحب نے بہت تفصیل سے بہت اچھا تبصرہ کیا ہے، مگر دانستہ یا غیر دانستہ وہ اس پورے معاملے میں نام نہاد آزاد عدلیہ کے کالے کردار پر تبصرہ کرنا بھول گئے، محاورا تو ہے راتوں رات، مگر یہاں تو پوری قوم کو دن دھاڑے انصاف کی ٹوپی پہنا دی گئی، انصاف دینے میں اتنی جلد بازی کم از کم میں نے تو اپنی پوری زندگی میں پاکستان میں نہیں دیکھی، چلیں مان لیا کے دیت کی وجہ سے قتل کا مقدمہ ختم ہوگیا مگر ناجائز اسلحے کے کیس کا کیا بنا ؟ جس میں باآسانی سات سال قید کی سزا دی جاسکتی تھی، وہ سارے شواہد کیا ہوئے جو ریمنڈ ڈیوس کو جاسوس ثابت کر رہے تھے جاسوسی والے کیس کا کیا بنا ؟ کوئی بتائے گا کے نام نہاد آزاد عدلیہ کو کتنے اتنا برق رفتا فیصلہ سنانے کے کتنے پیسے ملے ؟ کتنے ججوں کی فیملیز کو نیشنلیٹی ملی امریکہ کی ؟ میں نے کچھہ عرصہ پہلے ہی عدلیہ کے حوالے سے پوسٹ میں بتایا تھا کے یہ سب اندر سے ایک ہیں یہ سب ہماری بربادی میں برابر کے شریک ہیں۔ جس پر جاوید گوندل صاحب خفا ہوگئے اور پوری قوم کو ہی افتخار چوھدری بننے کا مشورہ دے بیٹھے ان کا کیا ہوا تبصرہ یہاں پیسٹ کر رہا ہوں۔
بھائی صاحب ہتھ ہولا رکھو۔ ایک افتخار چوہدری کرے تو کیا کرئے؟۔ آپکے خیالات حکمرانوں کے دل کی آواز ہے کہ افتخار چوہدری کبھی ایک بار اسعفٰی دے سہی تو ایسا ڈوگر لائیں گے کہ پاکستانی عوام کو دن میں تارے نظر آجائیں۔ پورے پاکستان کو بیچنے میں آزاد ہوجائیں گے۔

ضرورت اس امر کی ہے کہ باقی ماندہ قوم بھی افتخار چوہدری بنے۔ بھلے مشرف کا دور قوم سہہ کر ظلم کے سامنے ڈھیٹ ہوچکی ہے ۔ مگر افتخار چوہدری کی طرح اپنے ساتھ رسوائے زمانہ کئیے گئے فیصلوں کے سامنے ڈٹ جائے۔کہ اب رینمائی کے لئیے آسمان سے پیغمبر نہیں اترتے۔ نبی آخر الزماں صلی اللہ علیہ وسلم نے ظلم کا مقابلہ کرنے اور ناانصافی کے سامنے ڈٹ جانے کی ہدایت کر رکھی ہے جو رہتے زمانوں تک یونہی رہے گی۔ مگر ادہر تو یہ عالم ہے کہ ایک گال پہ چانٹا کھا کر بار بار اپنے رخسار مزید چانٹوں کے لئیے پیش کر دئیے جاتے ہیں اور جن سے چانٹے کھاتے ہیں۔ انہیں کی خوشامد اور چاپلوسی کرتے تھکتے نہیں۔

اس ظلم اور حالات سے مقابلہ کرنے کے لئیے جب عوام کمر باندہیں گے تو انقلابی رہنماء ان کے اندر سے خود بخود سامنے آجائئیں گے۔ یہ قدرت کا اٹل اصول ہے۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

یہاں ورثاء کو دیت دینے یہ نا دینے وصولنے یا نہ وصلولنے کا معاملہ نہیں ہے۔
قومی غیرت نام کی لونڈی شاید اس پورے خطے میں پیدا ہی نہیں ہوئی اگر ہوئی تھی تو زندہ دبا دی گئی ہے

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

جب پوری قوم بے غیرت ہے تو ایک افتخار چوہدری کو کیا رونا۔۔۔
یہ عدلیہ والے گوندل صاحب کے مامے چاچے ہیں کیا؟

UncleTom کہا...

جی ایچ کیو کے ہجڑے اور نواز لیگ اور زرداری منگتوں کی لیگ اور ایم کیو ایم کا بھگوڑا اور باقی سولہ کڑوڑ جاہل ، یہ سب کے سب اپنی بربادی کے خود زمے دار ہیں ، نسیم حجازی نے اپنے ایک ناول میں عجیب انداز میں میسور کی تباہی کا لکھا ہے کہ میر صادق کی بیٹی انگریزوں سے اپنی عزت بچاتی بھاگ رہی تھی کہ میں میر صادق کی بیٹی ہوں ایک طرف سے آواز آرہی تھی کہ میں پورنیا کی بیٹی ہوں ۔ جب عذاب آے گا تو انکی حالت ہم سے زیادہ بری ہو گی ۔

بلاامتیاز کہا...

آپکے حوالے کتاب اللہ سے تھے ۔ جزاک اللہ

لیکن میرے کمنٹ کا مقصد صرف یہ تھا کہ ایک بار پھر ہم نے ایک اسلامی قانون کو
اپنے مقصد کے لیے استعمال کیا ہے۔ اور اپنے مقصد کے لیے تو ہم ہمیشہ وہی حصہ دیکھتے ہیں جس کا ہمیں فائدہ ہو رہا ہو۔
ہم تو منافقین سے بھی آگے بڑھ گئے ہیں

عبد اللہ آدم کہا...

لمبے لمبے تبصرے ہمارا غصہ ٹھنڈا فرما دیں گے ................ اس سے زیادہ کچھ نہیں!!!

اس صورتحآل سے نکلنے کی سوچیں....................اصل کام یہ ہے صاحبان قدر دان بھائی جان.

یہ اشعار بے طرح یاد آگئے سو آپ بھی برداشت فرمائیں::

کہاں ہے ارض و سما کا مالک کہ چاہتوں کی رگیں کریدے
ہوس کی سرخی رخ بشر کا حسیں لبادہ بنی ہوئی ہے
کوئی مسیحا ادھر بھی دیکھے کوئی تو چارہ گری کو اترے
افق کا سینہ لہو سے تر ہے زمیں جنازہ بنی ہوئی ہے

محمد سعید پالن پوری کہا...

افتومنون ببعض الکتاب و تکفرون ببعض۔۔۔
کیا تم لوگ کتاب کے کچھ حصے پر ایمان لاتے ہو اور کچھ کا انکار کرتے ہو؟ ۔۔۔ ( پوری آیت یاد نہیں

ڈاکٹر صاحب کیا حسب حال آیت لکھی ہے، میں مکمل کردیتا ہوں
فما جزاء من یفعل ذالک منکم الا خزی فی الحیاۃ الدنیا و یوم القیامۃ یردون الی اشد العذاب و ما اللہ بغافل عما تعملون۔ بقرہ ۸۵
سو تم میں جو یہ کام کرنے والے ہیں انکی سزا سواے دنیا میں ذلت کے اور کیا ہو؟یہ لوگ قیامت کے دن بڑے سخت عذاب میں ڈالے جاءیں گے، اللہ تمہارے کاموں سے بے خبر نہیں ہیں

fikrepakistan کہا...

یاسر بھائی مامے چاچے ہیں یا نہیں یہ تو قوم کو اور لوگوں کو اس وقت سوچنا تھا جب ڈنگروں کی طرح سڑکوں پر آکر جوتے کھا رہے تھے افتخار چوھدری کی حمایت میں اور درحقیقت پاکستان کی مزید تباہی کی بنیاد رکھہ رہے تھے۔

راشد ادریس رانا کہا...

""""جی ایچ کیو کے ہجڑے اور نواز لیگ اور زرداری منگتوں کی لیگ اور ایم کیو ایم کا بھگوڑا اور باقی سولہ کڑوڑ جاہل ، یہ سب کے سب اپنی بربادی کے خود زمے دار ہیں ، نسیم حجازی نے اپنے ایک ناول میں عجیب انداز میں میسور کی تباہی کا لکھا ہے کہ میر صادق کی بیٹی انگریزوں سے اپنی عزت بچاتی بھاگ رہی تھی کہ میں میر صادق کی بیٹی ہوں ایک طرف سے آواز آرہی تھی کہ میں پورنیا کی بیٹی ہوں ۔ جب عذاب آے گا تو انکی حالت ہم سے زیادہ بری ہو گی ۔""""

انکل ٹام،

بہت اعلٰی بہترین الفاظ کا استعمال، بلکل میرے دل کی بات لکھ دی آپ نے.
لیکن غیرت نہیں جاگے گی، کیوں کہ وہ تو ہے ہی نہیں جاگے گی کہاں سے.
شکریہ

ڈاکٹر جواد احمد خان کہا...

میں اپنے جذبات شیئر کرنے آیا تھا لیکن جناب رشید ادریس صاحب مجھہ سے پہلے ہی میرے دل کی بات کر گئے ...ان حالت میں تبصرہ تو کیا ہوگا دعا ہی کی جاسکتی ہے کہ الله تعالیٰ ہمارے اجتماعی جرائم کو معاف فرماے..ہم تو بدل سکتے نہیں کیا پتا الله سبحانه تعالیٰ اپنی سنت بدل دیں...

وقار اعظم کہا...

لو جی لوگوں کو مشرف کا غم اب بھی کھائے جارہا ہے کہ افتخار چوہدری کو کیوں بحال کروایا؟ کسی نے صحیح کہا ہے. لاتوں کے بھوت باتوں سے نہیں مانتے. یہ ڈنڈوں کے ہی عادی ہے.عدالتیں جب فیصلہ کرتی ہیں تو یہ عدالتوں کا گھیرائو کرتے ہیں۔ لیکن اس معاملے پر انہیں صرف عدالتیں ہی یاد آرہی ہیں۔ دوسرے چاچے ماموں کو بھول گئے جنہوں نے امریکہ کی طرف سے دیت کے پیسے ادا کرکے شاہ سے زیادہ شاہ کے وفادار ہونے کا حق ادا کیا۔

ایم اے راجپوت کہا...

ریمنڈ ڈیویس کی آزادی امریکہ کہ وفاداروں کو مبارک ہو۔
بے غیرتوں کا آقا اُن سے خوش ہوا۔
اب تو ڈالر ہی ڈالر اور موجاں ہی موجاں۔

طارق راحیل کہا...

سب پہلے سے طے تھا
فکر کی ضرورت نہیں
ہمارے حکمران ہیں نا ابھی بہت کچھ دیکھنے کو تیار رہیں

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.