کھوتے دے پتر

 


گل و گلچیں کا گلہ بلبل خوش لہجہ نہ کر


تو گرفتار ہوئی اپنی صدا کے باعث


 


عزت ماب صدر مملکت بادشاہ سلامت وائسرائے چوں چوں کا مرّبہ نہ اسلامی نہ جمہوریہ پاکستان جناب آصف علی زرداری صاحب جہنم کے ایندھن کافروں کے کافرستان جاپان تشریف لارہے ہیں۔جاپان کے سرکاری ٹی وی سے انٹرویوی خطاب میں فرماتے ہیں کہ پاکستان کو مدد وامداد کی ضرورت ہے۔پاکستان حالت جنگ میں ہے۔اگر یہ جنگ جیتی نہ گئی تو دنیا کو بہت بڑا خطرہ ہے۔کیسا خطرہ ہے اس کی تفصیلات بتانے کا تکلف نہیں فرمایا۔بس امداد کی دہائی فرمائی۔


پاکستان میں مسّلے بہت پائے جاتے ہیں۔کچھ تھوڑے بہت غیرت مند بھی پائے جاتے ہیں۔طالبان کے نام سے چاھے وہ مسعود ہو یا مردود نسوارچی ریمنڈ یا ڈائمنڈ دیوث کے ذریعے گونگے بہرے حیوانات کو سفارتی قسم کی تخریب کاری سے پھاڑی جا رہے ہیں۔اسلام سے تعلق ہو یا نہ ہو یہ مسلمان ہوں یا نہ ہوں۔یہ طالبان ہیں۔میں کہوں یا نہ کہوں وہ بھی اپنے آپ کو طالبان کہتے ہیں،اور نعرہ تکبیر بھی لگاتے ہیں۔


تیسری ، چوتھی ، پانچویں طاقت؟ کھوتے دے پتر؟خلائی مخلوق؟


یہی کچھ ہمارے پیارے پیّا سدھارے پیر ومرشد شاہ عالی جناب کتیاں والی سرکارجناب داعی نسبت رسول  صوم و صلوات کی پابندی کے خلاف بوجہ روشن خیالی!!بھی فرماتے تھے۔اور خوب مال و دولت بٹورتے تھے۔کوئی تفاوت؟؟؟۔


الفاظ و معانی میں تفاوت نہیں لیکن


مش کی بانگ وہی زرداری کی بانگ بھی وہی


یہ سب جب سنا مردود و منحوس ننگ دین ننگ ملت ننگ وطن کتیاں والی سرکار نے۔


طبلہ بجا کر کورنش بجا کر عرض کیا کہ شاید حال کے بادشاہ پاکستان کو سمجھ آ ہی جائے!!!!۔


اے بادشاہ!!!۔کوئی کسی کمال سے دنیا میں نہال ہوتا ہے۔،ناحق حرام زادے کی بدولت  حلال ہوتا ہے۔


کمال شے ، زوال شے ہے،اس پر لاکھ حاسد ہوں


بھلا نازاں نہ ہوں کیوں کر میں اپنی بے کمالی کا


خدا جانے دیکھا ، دیکھ کر یہ چاند ، منہ کس کا


ہوئی ہے عید غیروں کو ، ہمیں ہے چاند خالی کا


میں نے دانستہ اپنے ہاتھ  سےپاوں میں کلہاڑی ماری


فلک نے بنا کر بات بگاڑی۔ (فسانہ عجائب از رجب علی بیگ سرور سے اقتباس)


اب سردست کچھ تدبیر بن نہیں آتی ہے۔صورت مرگ آئینہ چشم میں مد نظر ہے۔ہماری ہمیں کو خبر ہے،کوئی گھڑی میں مفت جان جاتی ہے۔جو جانتا ہے ، وہ دیکھتا ہے ، جسے خبر نہیں ، اس سے کہہ دو!!۔


تمہارے واسطے غریب دیار ہوئے اور تمہارے سبب سے قتل کے سزاوار ہوئے۔

کھوتے دے پتر کھوتے دے پتر Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 11:35 AM Rating: 5

9 تبصرے:

Tweets that mention کھوتے دے پتر | عام بندے کا حال دل -- Topsy.com کہا...

[...] This post was mentioned on Twitter by UrduFeed and UrduFeed, Urdublogz.com. Urdublogz.com said: UrduBlogz.com -: کھوتے دے پتر http://bit.ly/hT2vLH [...]

ڈاکٹر جواد احمد خان کہا...

یہی کچھ ہمارے پیارے پیّا سدھارے پیر ومرشد شاہ عالی جناب کتیاں والی سرکارجناب داعی نسبت رسول صوم و صلوات کی پابندی کے خلاف بوجہ روشن خیالی!!بھی فرماتے تھے۔اور خوب مال و دولت بٹورتے تھے۔کوئی تفاوت؟؟؟۔

بہت خوب جناب :D ..یاسر بھائی! ایمانداری سے کہوں تو کبھی کبھی آپ حیران کر دیتے ہیں ..
کتیاں والی سرکار ابھی تک پردے میں ہے .کوئی اشارہ ؟

ضیاء الحسن خان کہا...

کیا یار جس ملک میں کما کھا رہے انکو جہنم کا ایندہن کہہ رہے۔۔۔ کسی چپٹی کو پتہ چلا نہ تو لگ پتہ جائے گا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اور یہ اتنی عزت افزائی کس خوشی میں کی گئی ہے ۔۔۔۔ سیدھے سیدھے کنجر آگیا جابان لکھ دیتے سب سمجھ جاتے :mrgreen:

جاوید گوندل ۔ بآرسیلونا ، اسپین کہا...

عزت ماب صدر مملکت بادشاہ سلامت وائسرائے چوں چوں کا مرّبہ نہ اسلامی نہ جمہوریہ پاکستان جناب آصف علی زرداری صاحب...
ہائیں؟ یہ کیا سارے پاکستان کی خبر لے ڈالی۔ صرف باداشہ سلامت سے طیش کھا کر۔۔۔۔

۔ ۔ ۔ ۔یہی کچھ ہمارے پیارے پیّا سدھارے پیر ومرشد شاہ عالی جناب کتیاں والی سرکارجناب داعی نسبت رسول صوم و
صلوات کی پابندی کے خلاف بوجہ روشن خیالی!!۔ ۔ ۔ ۔ ۔

پیا سدھارے انگلستان کی خلافت باہمی جاری ہی تو ہے۔۔
یاسربھائی کیوں جان جلاتے ہیں؟ اللہ بہتر کرے گا۔

وقاراعظم کہا...

واہ واہ مرشد، کتیاں والی سرکار نے بڑا لطف دیا اور طبلہ نوازی نے تو میلہ لوٹ لیا. سنا ہے آپ نے طبلہ نواز کے لیے جوتی تیار رکھی ہے، ذرا اس سے امداد کی دہائی دینے والوں کی تواضع کریں تو مانے.... :mrgreen:

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

ارے ڈاکٹر صاحب ہم آپ کو حیران ضرور کرتے ہوں گے۔لیکن وعدہ رہا پریشان کبھی نہیں کریں گے۔ :mrgreen:
کتیاں والی سرکار کی طرف ہم اشارہ نہیں کر سکتے۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

مولبی صاحب جہنم کا ایندھن تو کہنا ہی پڑتا ہے۔۔۔۔۔۔کیا کریں فطرت ہی ایسی ہے ہماری۔ :lol:

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

گوندل صاحب دل جلتا ہے تو سب کچھ راکھ راکھ نظر آتا ہے۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

ارے بھائی مولوی یہ ہمیں کہاں آنے دیتے ہیں ،ملاقات کا موقع ہی نہیں دیتے۔ :mrgreen:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.