سمندری پانی سے یورینیم نکالنے کی ٹیکنالوجی

نیو کلیئر انرجی اس وقت ساری دنیا کی ضرورت ھے۔ماحولیاتی مسائل کے تناظر میں اگر دیکھا جائے تو مستقبل میں انرجی کا حصول نہایت اہم اور مشکل ہو جائے گا۔نیو کلیئر پلانٹ کیلئے یورینیم ایک نہایت لازمی ایندھن ھے۔جاپان یورینیم سوفیصد غیر ممالک سے درآمد کرتا ھے۔اور مستقبل میں بہت سے مسائل سے بچنے کیلئے جاپان کا یورینیم کی پیداوار میں خود کفیل ہونا نہایت ضروری ھے۔جاپان میں اس یورینیم  کو حاصل کر سکنے کی قدرتی معدنیات نہیں پائی جاتیں۔


 رپورٹ کے مطابقOECD/NEA-IAEA  1995


مستقبل میں دنیا کی ضرورت اور زمین میں محفوظ یورینیم کو کثیر سرمایہ کاری اور محنت کرکے نکالنے کے باوجود یورینیم کے ذخائر  پانچ سو ملین ٹن سے لیکر چھ سو ملین ٹن ہیں۔ان ذخائر کا اس طرح دنیا کی ضرورت کے مطابق استعمال جاری رکھا گیا تو بہت جلد دنیا اس ایندھن کی کمی کا شکار ہوجائے گی۔یعنی ایٹمی پلانٹ ہونے کے باوجود ایٹمی ایندھن نہیں ہوگا۔


۔Fast breeder reactorاورFusion reactor


کیلئےجاپان کی تحقیق کافی ترقی یافتہ اور کامیاب ھے۔لیکن اس ترقی یافتہ ٹیکنالوجی کے استعمال سے پہلے ہی توانائی کے بحران کا آنے کا خطرہ موجود ھے۔یہ خطرہ محسوس کر کے جاپانی سائینسدانوں  نے سمندری پانی کے استعمال پر غور شروع کیا۔


سمندری پانی میں یورینیم کی مقدار پر تحقیق کرنے کا نتیجہ جاپان کے سمندری پانیوں میں پائی جانے والی یورینیم کی مقدار ایک سال میں پانچ سو ملین ٹن ھے۔یہ ساری دنیا میں محفوظ یورنیم کے ذخائر کے برابر ہے۔اور صرف جاپان کے سمندری پانیوں میں ایک سال میں پائے جانے والے ذخائر کی مقدار ھے۔


جاپان کی یورینیم کی سالانہ استعمال کی ضرورت چھ ہزار ٹن ہے۔اور جاپان کی حدود میں سمندری موجیں بلیک سٹریم جو سالانہ یورینیم اٹھا کر لاتی ہیں۔انکا صرف سفر اعشاریہ ایک فیصد اگر قابل استعمال کر لیا جائے تو جاپان کی سالانہ ضرورت پوری کی جاسکتی ھے۔













































جاپان کی سمندری حدود میں بلیک سٹریم کے ذریعہ آنے والی معدنیات کی مقدار
نادر دھاتی وسائل کا نامسالانہ نقل و حمل
کل(ملین ٹن)سمندری فی حصہ(ٹن/m2
کوبالٹ(Co)160.005
ٹائٹینیم(TI)1700.059
وانیڈیم(V)3400.119
یورینیم(U)5200.182
مولبڈینم(Mo)1,5800.553
* بلیک سٹریم کی بہاوء کی شرح:1.75m/s *بلیک سٹریم کی روانی کی شرح:5000ملینm3/s



[caption id="attachment_869" align="aligncenter" width="524" caption="پلانٹ کا نمونہ"]پلانٹ کا نمونہ[/caption]

یورینیم کو منتخب کرکے نکالنے والے کپڑے کی ایجاد


سمندری پانی ابالا جائے تو بھاپ بن کر اڑ جاتا ھے،اور باقی نمک بچتا ھے۔۳۴لاکھ بنیادی نمک میں سے صرف ایک عدد یورینیم نکلتی ھے۔اگر یہ یورینیم نکالنے کی ٹیکنالوجی مستقل بنیادوں پر تیار کرلی جاتی ہے تو مستقبل میں یورینیم کی کمی کے خطرات سے محفوظ رہا جا سکتا ھے۔اس لئے تقریباً دو عشروں  سےاس پر تحقیق شروع کی گئی۔باربار کی ناکامیوں کے بعد خاص کر یورینیم کا تجزیہ کرنے والا کیمیکل آمیڈوشیم کا معلوم ہوا۔ کافی تجربات کرنے کے بعد یورینیم کو سمندری پانی سے نکالنے کیلئے آلہ تیار کیا گیا اور اس آلے میں خصوصی طور پر یورینیم منتخب کرکے نکالنے کیلئے فلٹر نما کپڑا ایجاد کیا گیا۔ جس سے یورینیم کو صاف کرکے ایٹمی ریکٹر میں استعمال ہونے والا ایندھن یلو کیک ۱۶گرام کامیابی سے تیار کر لیا گیا۔دنیا میں یہ واحد جاپان کی  کامیابی ھے۔اور اس ٹیکنالوجی کے رجسٹرڈ حقوق جاپان کے پاس ہیں۔ ایٹمی توانائی نکالنے کے دوران واناڈیئم نامی دھات بھی یورینیم سے دگنی مقدار میں نکلی جوٹائٹینیم نامی دھات کا متبادل ھے۔اس کے علاوہ ٹائٹینیم ، کوبالٹ ، مولبڈئنیم نامی دھاتیں بھی کامیابی سے نکالی گئی ہیں۔




[caption id="attachment_870" align="alignright" width="229" caption="سمندری پانی سے دھا تیں نکالنے کا آلہ"]سمندری پانی سے دھا تیں نکالنے کا آلہ[/caption]

اس ٹیکنالوجی کے حصول کے بعد مستقبل میں جاپان توانائی کے میدان میں خود کفیل ہو جا ئے گا۔ساری دنیا بھی اگر سمندر سے یہ توانائی اور دوسری معدنیات حاصل کرے تو بھی کسی قسم کی کمی یا ماحولیاتی خطرہ نہ ہونے کی تصدیق کی جا چکی ھے۔اور اس سال سے اس طریقے سے توانائی حاصل کرنے کیلئے پلانٹ کی تعمیر کا کام شروع کیا جا چکا ھے۔


اگر آپ اس ٹیکنالوجی میں دلچسپی محسوس کر رہے ہیں تو یہاں پر اس کے متعلق معلومات حاصل کی جاسکتی ہیں۔


 یہاں سے اس تحریر کو ترجمہ کیا۔


اس کے علاوہ اس وقت تھیوریم کو یورینیم کے متبادل کے طورپر استعمال کی ٹیکنالوجی صرف امریکہ کے پاس ھے۔اور اس کا پہلا ایٹمی پلانٹ انڈیا میں زیر تعمیر ھے۔


نوٹ ـسائینس کی سمجھ نہ ہونے کے برابر ھے۔اور اردو کی تحریر کی قابلیت سے بھی پیدل ہوں۔امید رکھتا ہوں میرا الٹا سیدھا  لکھاکسی کام آہی جائے گا۔ 

سمندری پانی سے یورینیم نکالنے کی ٹیکنالوجی سمندری پانی سے یورینیم نکالنے کی ٹیکنالوجی Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 9:46 PM Rating: 5

8 تبصرے:

یاسر عمران مرزا کہا...

یہ تو بہت اہم ٹیکنالوجی ہے اور جاپان کے علاوہ دنیا بھر کے کام آسکتی ہے۔ لیکن حضرت انسان نے اسے پھر تباہی اور بربادی کے لیے استعمال کرنا شروع کر دیا تو پھر ککھ نہیں رہنا۔

خاور کہا...

ایک بات کی تصیح
که یورینیم جاپان سو فیصد ایمپورٹ کرتا هے
نهیں نینگیو مورا کے پہاڑوں سے بھی نکلتی هے جهاں کی مٹی کی بنائی هوئی اینٹوں کا مسئله بنا هوا ہے که جاپان بھر میں کوئی چار لاکھ اینٹیں عمارتوں میں لگ چکی هیں
جن کے تابکاری اثرات سے کینسر کا خطرھ هے
باقی تحریر اچھی ہے
اس طرح کی تحاری لکھا کریں اپ کہاں دوسری گپوں میں لگے رہتے هیں
ایک بات کا
که یه تصاویر جہان سے لی هیں
ان کی اجازت کا کیا کیا هے ورنہ کیس بن جائے گا

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

خاور جی۔میل کرکے یہ چھاپہ لگایا ھے۔اور اگر کسی مالی فائدے کیلئے نہ استعمال کی جائے تو کوئی حرج نہیں ھے۔

عثمان کہا...

او بھائی ،
ایجنسیاں آپ کے پیچھے ویسے ہی لگی ہوئی ہیں. اور اوپر سے یورنیم۔۔۔ 8O 8O

وقاراعظم کہا...

یہ جاپانی باز نہیں آتے، یورینیم کی کمی کا بھی توڑ نکال لیا...

دوست کہا...

بہت اچھی اور معلوماتی تحریر کا ترجمہ کیا ہے.

عمران اشرف کہا...

اعلی کام کیا ہے. ھم لوگ شعیہ سنی کے چکر میں ہی پڑے رہیں گے

Agha Waqar کہا...

یہ تو ميري ٹيكنألوچی ہے۔

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.