شیطانیت

ہمارا مذہب پر لکھنے کا کوئی ارادہ نہیں ھے۔اور نہ لکھنا چاھتے ہیں۔لیکن شیطانیت پر تو لکھ سکتے ہیں۔اور اگر الٹی سیدھی میل بھی وصول ہو جائے کہ اس شیطانیت کے متعلق مطالعہ کر کے مخالفت کیا کرو۔نہیں تو گہنگار  ہو کے جہنمی ہو جاو گے۔ تو لکھ ہی دینا چاھئےاب ہمیں لکھنا تو نہیں آتا لیکن پڑھنے کے تو بہت شوقین ہیں جی۔

۔پہلی با ت یہ ہے کہ ہم نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کو آخری نبی مانتے ہیں۔اب اگر کوئی کہہ دے کہ نبی اور رسول میں فرق ھے۔تو ہمیں اس سے کیا لینا؟

ہمیں اتنا معلوم ہے کہ بس ہمارے پیارے نبی صلی اللہ علیہ وسلم آخری نبی ہیں۔

اب کوئی اس بات پر اصرار کرے کہ عیسی علیہ اسلام بھی تشریف لایئں گے اور امام مہدی بھی تشریف لائیں گئے۔

تو آنے دیں جی۔

آئیں گئے تو سب انسا نوں کیلئے آئیں گے۔نہ کہ کوئی نیا تماشہ لائیں گے۔اب اگر کوئی کہے کہ مسیح علیہ اسلام اور امام مہدی تشریف لا چکے ہیں اور ان کو نہ ماننے والے کافر اور جہنمی ہیں۔

اب بندہ دیکھے کہ عیسی علیہ اسلام کہاں؟ اور امام مہدی کہاں ہیں؟

کہنے والے کہتے ہیں کہ وہ گذر چکا ھے۔اور ایک ہی جسم میں دونوں حضرات آئے ہوئے تھے۔

کیسے آئے ھوئے تھے؟

خود ہی حاملہ ہوئے اور خود ہی پیدا ہوئے اور خود ہی مو عود و موجود بھی ھو گئے۔

ان صاحب کے متعلق ہم نے کچھ اس طرح پڑھا کہ ان میں تین چیزیں ایسی تھیں کہ جن کے سبب ان کے متعلق پڑھنے والا کنفیوز ہو جاتا ھے۔ کہ اس میں سے کون سا حقیقی سبب ہے۔ جس کی وجہ سے ان صاحب سے ایسی عجیب حرکتیں سرزد ہوئیں

۱۔دینی رہنمائی کے منصب پر پہنچا جائے اور نبوت کے نام سے پورے عالم اسلامی پر چھایا جائے۔

۲۔وہ مالیخولیا جس کے بار بار تذکرہ سے اس کی اور اس سے متعلق اس کے ماننے والوں کی کتابیں بھری ہوئی ہیں۔

۳۔مبہم اور غیر واضح قسم کے اغراض و مفادات اور انگریزی سرکار کی خدمت اور نمک حلالی

 یہ ذہنی انتشار کے مریض تھے۔ مشہور ہونا چاہتے تھے۔ اور بڑی ہی شدت سے ایک نئے دین کے بانی بننا چاہتے تھے۔اور نبی اکرم صلی اللہ علیہ وسلم کی طرح کے متبعین اور مومنین کی بھی خواہش رکھتے تھے۔ یہاں سے یہ انگریزوں کی نظروں میں چڑھے اور انگریزوں نے انہیں ہاتھوں ہاتھ لیا۔ایجنٹی ملتے ہی انہوں نے بڑی تیزی دکھائی پہلے منصب تجدید کا دعوی کیا پھر امام مہدی بن گئے کچھ دن کے بعد ہی مسیح موعود ھوگئے۔اور آخر کار انگریزوں کی گود میں بیٹھ کر نبوت کے تخت پر بیٹھ گئے۔

انگریز کے احسانات کا بدلہ ان صاحب نے خوب دیا۔اور اس کا تذکرہ کرتے ہوئے بھی نہیں چوکے۔

یہ صاحب جو بقول خود حکومت برطانیہ کا  :خود کاشتہ پودہ:  تھے

ان صا حب کی چند تحریریں لکھ رہا ہوں۔پوسٹ لمبی ہو جائے گی اس لئے اگر کسی کو حوالوں کی ضرورت ہو تو رابطہ کر لے۔میرا میل ایڈریس تو آپ کو معلوم ہی ہے!۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۱۔ میری عمر کا اکثر حصہ اس سلطنت انگریزی کی تائید اور حمایت میں گذرا ھے۔

اور میں نے ممانعت جہاد اور انگریز کی اطاعت کے بارے میں اس قدر کتابیں لکھی ہیں اوراشتہار شائع کئے ہیں کہ اگر وہ رسائل اور کتابیں اکٹھا کی جائیں تو پچاس الماریاں ان سے بھر سکتی ہیں۔میں نے ایسی کتابوں کو تمام ممالک عرب اور مصر اور شام اور کابل اور روم تک پہنچا دیا ھے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۲۔ میں ابتدائی عمر سے اس وقت تک جو قر یبا ساٹھ برس کی عمر تک پہنچا ہوں اپنی زبان اور قلم سے اس اہم کام میں مشغول ہوں تاکہ مسلمانوں کے دلوں کو گورنمنٹ انگلشیہ کی سچی محبت اور خیر خواہی اور ہمدردی کی طرف پھیردوں اور ان کے بعض کم فہموں کے دلوں سے غلط خیال جہاد وغیرہ کے دور کروں جو ان کو دلی صفائی اور مخلصانہ تعلقات سے روکتے ہیں۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۳۔ اور میں یقین رکھتا ہوں کہ جیسے جیسے میرے مرید بڑھتے جائیں گے ویسے مسئلہ جہاد کے معتقد کم ہوتے جائیں گے،کیونکہ مجھے مسیح اور مہدی مان لینا ہی مسئلہ جہاد کا انکار کرنا ھے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

۴۔میں نے بیسیوں کتابیں عربی اور فارسی اور اردو میں اس غرض سے تالیف کی ہیں کہ اس گورنمنٹ محسنہ سے ہر گز جہاد درست نہیں،بلکہ سچے دل سے اطاعت کرنا ہر ایک مسلمان کا فرض ہے۔چنانچہ میں نے یہ کتابیں بصرف زرکثیر چھاپ کر بلاد اسلام میں پہنچائی ہیں، اور میں جانتا ہوں کہ ان کتابوں کا بہت سا اثر اس ملک ہندوستان پر بھی پڑا ھے۔اور جو لوگ میرے ساتھ مریدی کا تعلق رکھتے ہیں،وہ ایک ایسی جماعت تیار ہو جاتی ہے کہ جن کے دل گورنمنٹ کی سچی خیر خواہی سے لبالب ہیں۔ان کی اخلاقی حالت اعلی درجہ پر ہے اور میں خیال کرتا ہوں کہ وہ تمام اس ملک کے لئے بڑی برکت ہیں اور گورنمنٹ کے لئے دلی جاں نثار۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اسی جہاد کی مخالفت اور مسلمانوں سے جہاد کا جذبہ ختم کر نے کیلئےمرزا غلام احمد قادیانی کے مرید تبلیغ کے لئے افغانستان گے کہ حکومت انگلشیہ  سر توڑ کوشش کے باوجود افغانستان کو اپنی غلامی میں نہ لے سکی کہ افغانیوں میں جذبہ جہاد اور حوصلہ جنگ  بہت زیادہ تھا۔عبد اللطیف قادیانی، ملا عبدالحلیم قادیانی اور ملا نور علی قادیانی  افغانستان گئے کہ حکومت انگلشیہ کا نمک حلال کریں۔ لیکن افغان مسلمانوں کے ہاتھوں فنا کے گھاٹ اترے۔

شاعر مشرق علامہ اقبال جو مرزا غلام احمد قادیانی کو ابتدا سے جانتے تھے۔انہوں نے سب سے پہلے اس فتنہ کے ساتھ سخت رویہ اختیار کیا اور اسلام سے الگ ایک غیر مسلم اقلیت کا خیال پیش کیا۔

علامہ اقبال نے۱۰ جون انیس سو پینتیس  کو ہندوستان کے انگریزی اخبار اسٹیٹس مین  کو ایک مراسلہ بھیجا جس کا اقتباس ہے۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

یہ عقیدہ کہ حضرت محمد صلے اللہ علیہ خاتم النبیین ہیں،تنہا یہی وہ عامل ہے جو اسلام اور ان ادیان کے درمیان ایک مکمل سرحدی خط کھینچتا ہے۔جو توحید میں مسلمانوں کے ہم عقیدہ ہیں اور محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی نبوت کو بھی تسلیم کرتے ،لیکن وحی اور نبوت کا سلسلہ ختم ہو نے کے قائل نہیں ہیں۔جیسے کہ ہندوستان میں برہمو سماج ھے،اور یہی وہ چیز ہے جسے دیکھ کر کسی گروہ پر داخل اسلام یا خارج اسلام ہونے کا حکم لگایا جا سکتا ہے۔میں تاریخ میں کسی ایسے مسلمان گروہ کا نام نہیں جانتا جس نے اس خط کو پھاند جانے کی جرأت کی ہو،ایران کے بہائیہ فرقہ نے ضرور عقیدہ ختم نبوت کا انکار کیا،لیکن انھوں نے صاف صاف یہ بھی اعلان کیا کہ وہ ایک الگ جماعت ہیں،جو عرف عام کے اعتبار سے مسلمان نہیں۔

بیشک ہمارا عقیدہ ہے کہ اسلام اللہ تعالی کی طرف سے آیا ہوا دین ہے،لیکن اس کا قیام بحثیت ایک سوسائٹی یا بحثیت ایک امت سراسر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کی شخصیت پر موقوف ہے،اس لئے قادیانیوں کے سامنے بس دو ہی راستے ہیں،یا تو وہ بہائیوں کی تقلید کریں اور خود کو مسلمانوں سے جدا کر لیں یا ختم نبوت کی انوکھی تفسیر سے دست بردار ہو جائیں۔ورنہ انکی یہ سیاسی ڈھب کی تاویلات ان کے دل کے اس چور کی غمازی کر رہی ہیں کہ یہ لوگ صرف ان فوائد کے لالچ میں مسلمانوں کے دائرے میں گھسے رہنا چاھتے ہیں، جوفوائد مسلمان کے نام سے وابستہ ہیں، کیونکہ اس کے بغیر ان فوائد اور منافع میں انھیں کوئی حصہ نہیں مل سکتا۔

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ایک دوسری جگہ علامہ اقبال لکھتے ہیں۔

ہر وہ گروہ جو معروف و مصطلح اسلام سے انحراف کرے اور اسکا دینی فکرومزاج ایک نئی نبوت پر استوار ہو اور وہ ان تمام مسلمانوں کو صاف صاف تکفیرکرتا ہو جو اس نئی خانہ ساز نبوت کی تصدیق نہ کریں۔وہ گروہ اسلام کی سالمیت کے لئے بہت بڑا خطرہ ہے اور مسلمانوں کو اس پر سختی سے نظر رکھنی چاھئے۔اسلامی معاشرہ کی وحدت صرف عقیدہ ختم نبوت پر منحصر ہے۔

ہماری مخالفت کی یہی وجہ ہے کہ ان لوگوں کی تحریروں میں ہی ہمیں تضاد نظر آتا ہے۔محبت کا اور امن کا نعرہ بھی لگاتے ہیں۔ثبوت ایک صاحب ہیں طیفہ نام کے ان کی سائیٹ پر کچھ اس طرح کے الفاظ لکھے ہیں کہ محبت سب کیلئے نفرت کسی سے نہیں!! ۔

یہ مرزا بشیرالدین محمود فرزند مرزا غلام احمد کی کتا ب:۔ آئینہ صداقت۔: لکھا ھے۔

کل مسلمان جو حضرت مسیح مو عود کی بعیت میں شامل نہیں ہوئے،خواہ انھوں نے حضرت مسیح مو  عود کا نام بھی نہیں سنا، وہ کافر اور دائرہ اسلام سے خارج ہیں۔

یہ ان کی محبت ہے۔ جو تھوڑی تھوڑی اخلاقی ہے۔ہمارے پاس اور بھی کافی مواد ہے۔پورے پورے دیوان چھاپ دیں گے۔

مزید اگر قادیانیت کے بارے معلومات چاہیں ہوں تو فی الحال یہاں پر پڑھیں۔
شیطانیت شیطانیت Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 11:31 PM Rating: 5

28 تبصرے:

سعد کہا...

میرے بلاگ کا لنک؟

وقاراعظم کہا...

واہ بھئی کیا پول کھولا ہے قادیانیوں کا. ویسے پول تو کھلا پڑا ہے، یہی عقل کے اندھے اس کذاب کے ساتھ چمٹے ہوئے ہیں.

میں علامہ محمد اسد کی خودنوشت کا اردو ترجمہ "بندہ صحرائی" کا ایک مضمون "ہم نے کشمیر کیسے کھویا" پڑھ رہا تھا تو معلوم ہوا کہ ہمارے پہلے وزیر خارجہ ظفراللہ خان قادیانی نے انگریزوں کی نمک حلالی میں کشمیر کو ہندوستان کی جھولی میں ڈالنے کے لیے کیا زبردست کردار ادا کیا تھا. یہ مضمون یہاں پڑھا جاسکتا ہے.
http://www.tarjumanulquran.org/2010/07_july/pakistaniyat001/1.htm

عثمان کہا...

اور سر جی یہ کیا؟
سعد کے بلاگ کا لنک کیوں
اور اردو بلاگرز ایگریگیٹر میں شازل کا نام آپ کے نام کی جگہ کیوں آ رہا ہے؟

جاپاکی کہا...

جاپانی بھائ

اور بھی غم ہیں زمانے میں
قادیانیوں کے سوا۔‘
:lol: :lol: :lol:

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

سعد جی۔ طیفے کا لنک تو نہیں دے سکتا۔ آپ کے بلاگ پر اس فتنہ کے متعلق تحاریر موجود تھیں اس لئے لنک دے دیا۔
معذرت

کاشف نصیر کہا...

بہت خوب، لیکن اردو بلاگستان میں دو لوگ لطف السلام نامی بھائی صاحب اور حمید نامی بھائی صاحب قادیانیوں کے دفاع کے بکواس انجام دے رہیں ہیں، تھوڑی دیر میں وہ آپ کے بلاگ پر بھی وارد ہوجائیں، اور پھر ہوگی لمبی بحث، صاحب چھوڑوں ان قادیانیوں کو نہیں سمجھنے کے یہ

افتخار اجمل بھوپال کہا...

يہ حال ہے کہ جب لکھنا نہيں آتا ۔ کيا ہو گا جب لکھنا آ جائے
محسوس ہوتا ہے کہ آپ نے اس معاملہ پر کافی خشوع و خضوع کيا ہے ۔ ميں اِن شاء اللہ پاکستان واپس جا کر آپ سے رابطہ کروں گا کيونکہ ميرا اکٹھا کيا ہوا کافی مواد ضائع ہو گيا تھا

بدتمیز کہا...

ياسر خواہ مخواہ پنجابی صاحب

http://www.theajmals.com/blog/2010/07/%d8%a8%d9%8a%d9%88%db%8c-%da%88%d8%a7%d9%86%d9%b9%d8%aa%db%8c-%db%81%db%92/

عدنان کہا...

بہت اچھے طریقے سے لکھا ہے آپ نے بھائی

الف نظامی کہا...

Ahmadiyya Movement - British-Jewish Connection

http://www.alhafeez.org/rashid/bjc.pdf

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

الف نظامی صاحب لنک کیلئے شکریہ

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

اجمل صاحب ہما ری کیا اوقات جناب.
خاپاکی صاحب ہم بھی دوسرے غموں میں لگے ہوئے ہیں.
لیکن کیا کریں کوئی تنگ کرے تو کچھ نہ کچھ کر نا پڑتا ھے.
کاشف جی یہ لوگ سیدھے سادے اور ان کے متعلق نہ جاننے والے بندوں کو پھنسانے کی کوشش کرتے ہیں جہاں انہیں معلوم ہو کہ دال گلنے کی نہیں ہے وہاں سے کترا کے گذر تے ہیں.
بحر حال ہمیں اس فتنہ کے متعلق ہشیار باش رہنا چاھئے.
نہ جاننے والوں کے علم میں لاتے رہنا چاھئے.
یہ آستین میں گھستے ہیں اور عین موقع پر وار کر تے ہیں.
بندہ سو چتا رہ جاتا ہے یہ تو اپنا بندہ تھا!!

سعد کہا...

میں بھی حمید صاحب کی ریشہ دوانیوں سے تنگ آ کے کچھ لکھنے والا تھا اس موضوع پر لیکن آپ نے وہی باتیں لکھ دیں۔ جزاک اللہ

آپ زرا اس لنک پر جا کر اپنا ای میل رجسٹر کر لیں تاکہ آپ کے نام کے ساتھ تبصروں میں تصویر بھی آئے جیسے ہمارے تبصروں کے ساتھ آتی ہے۔ اس طرح ملتے جلتے ناموں کے شر سے محفوظ رہ جائیں گے۔ http://en.gravatar.com/

معیز کہا...

یاسر صاحب۔آپ نے واپس آنے سے منع کیاتھالیکن بندے میں یہی بری عا دت ھےکہ اچھا کام کرنے والوں کو شاباش دینے چلا آتا ھوں۔ محفل میں تھوڑی جگہ دینا پسند کريں گے۔آپ کو اسی ليے روزانہ ایک اچھا کا م کرنے کا کہا تھا۔کیوں کہ ھم کو کوئی بھی کام دس بار کہا جاۓ تو ایک بار کرتے ھیں۔اور یہ آپ نے اچھا کام کیاھے۔اس ليے شاباش تو بنتی ھے آپکی۔لگے رھوان منکرین کو ننگا کرنے میں اللہ تمھارا حامی وناصر ھو۔آمین

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

معیز صاحب میں نے کوئی اچھا کام نہیں کیا صرف اپنے دین و ایمان کی حفاظت کی کوشش کی ہے جو میرا مسلمان کی حثیت سے فرض بنتا ھے.میں ان کے عقیدے کو مذہب نہیں سمجھتا صرف اسلام اور مسلمان دشمن سمجھتا ہوں اس لئے قرآن یا حدیث کو نقل نہیں کیا.
باقی آپ کو منع کر نے کی محترم وجہ کچھ ایسی ہی تھی بے نام حضرات سے کافی کوفت ہو رہی تھی اس وقت اور شاید آپ میری کوفت کا شکار ہو گئے.جس کی معذرت چاہتا ہوں.
آپ مجھ سے اختلاف رکھئے،ڈانٹئے ڈپپٹئے ہمیں کوئی شکایت نہیں ہوگی. بحر حال آپ کی خوشی اور ہماری تعریف کے مشکور و ممنون ہیں :lol:

عین لام میم کہا...

بنیادی طور پر میں دیگر مذاہب کے بارے میں بات کرنے سے احتراز کرتا ہوں. لیکن قادیانیوں کا معاملہ ذرا مختلف ہے. یہ اسلام میں نقب زنی کرتے ہیں.
میری ان حضرات کیلئے ایک مخلصانہ (اندازہ لگائیں میں کتنا ’ٹالرینٹ‘ ہوں) مشورہ ہے کہ یہ جو پاکستانی فنڈامینٹلسٹ اور مجھ جیسے ٹالرینٹوں سمیت پوری دنیا کے مسلمان نہیں سننے والے لہٰذا میری ایک ہی اپیل ہے، خدارا اپنے آپ کو اسلام سے نتھی کرنے کی ناکام کوششوں میں نہ لگے رہیں. اس دنیا میں بہت مذاہب ہیں، آپ بھی باقائدہ آغاز کریں.... ہمیں تو اس مصیبت سے نجات دیں. جتنی امداد اب ملتی ہے اس سے کہیں زیادہ ملے گی. گارنٹی ہے!

محمد طارق راحیل کہا...

اللہ مسلمانوں کو عقل، غیر مسلموں کو ایمان ہمیں اور فساد کرنے والوں کو لگام دے
ہم مسلمانوں کو متحد فرما
اسلام کا بول بالا اور اس کو عروج پر پہنچا
ٹیکنالوجی کی سیدھی راہ پر مسلمانوں کو بھی اعلٰی مقام اور اپنے اسلاف کی تقلید عطا فرما
دین و دنیا میں توازن کرنے کی توفیق فرما
سب کو نماز اور قران کا صحیح حق ادا کرنے کی توفیق عطا فرما
ہماری آنے والی نسلوں کو بھی سچا مسلمان بنا
آمین

لطف الا سلام کہا...

یاد آوری کا شکریہ کاشف صاحب۔ اس قسم کے بلاگ پڑھ کر سوال اٹھتا ہے کہ ہم احمدی آپ کے نزدیک ایک حقیر سی اقلیت ہیں، جن کے عقائد کا نہ سر ہےنہ پیر۔ پھر اتنی تکلیف اٹھا کر آپ کے ملا حضرات مغربی ممالک میں چندے اکھٹے کرتے پھرتے ہیں۔ پاکستان کی اکثر مساجد کے ملا مہینے میں کم از کم ایک بار، اور کئی تو دن میں کئی کئی بار احمدیت کے خلاف دشنام طرازی کا بازار گرم کرتے ہیں۔ اس قسم کے بلاگر تھوڑے ہیں جو احمدیت کے خلاف زہر اگلتے ہیں۔ در اصل تعلیم یافتہ طبقےمیں نفرت کم ہے اور انٹر نیٹ تک ملا کی رسائی صرف صوتی ذرائع تک محدود ہے۔ لیکن جاپانی صاحب اور ان کی طرح کے لوگ بلاگنگ کی دنیا میں ملائیت کی نحوست پھیلانےکا فرض ادا کر رہے ہیں۔
ایک معمولی سی “گمراہ“ اقلیت کے لئے اتنا وقت نکالنا آج کے دور میں بڑا کارنامہ ہے۔ ملاں تو حلوے کے لئے یہ ڈھول بجاتا ہی رہے گا، آپ کو لگتا ہے گالی گلوچ کے “چسکے“ درکار ہیں۔ یہی چسکے آپ کی قبیل کو لے ڈوبیں گے- توبہ کریں۔ اللہ کا خوف کریں۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

لطف صاحب ہم کہاں ملا ہوئے.ملا کے تو خلاف لکھتے ہیں.
گالی گلوچ جناب ہم تو نہیں کرتے کہ ایسا کرنا بد اخلاقی میں آتا ھے.بد اخلاقی تو آپ کو معلوم ہی ھے کہ اچھی بات نہیں ھے جی. اور گالی گلوچ کس کی عادت تھی؟ لکھ ماروں ایک پوسٹ؟
اصلی ثبوتوں کے ساتھ؟

ہم تو صرف ایک معمولی اقلیت سے چھیرچھاڑ کے چسکے لیتے ہیں جی. ملا جی کو ویلا نہیں ملتا تو کیا ہم ہیں نا.

لطف الا سلام کہا...

اگر کوئی جھوٹ گھڑ کے، یا بلا سیاق وسباق بات پکڑ کر، کسی کی کردارکشی کی جائے تو اسے گالی ہی کہیں گے۔ خیر اس طرح طنز کرنا اور ٹھٹھے اڑانا بھی ایک مخصوص گروہ کی نشانی ہے۔ قرآن کریم میں بارہا ان باتوں سے منع کیا گیا ہے۔ اگر کوئی بات کرنی ہو تو سیدھی سیدھی (قول سدید) کر لیا کریں۔ ایسے موضوعات میں سنجیدگی اور مقصدیت نہ ہو تو ہم جیسے آپ کو جواب کیا دیں گے؟
اب آپ کو کیا میں جہاد کی فرضیت کے متعلق بتاؤں، ملک اور اولی الامر سے وفاداری کی بات کروں،امام مہدی اور نزول مسیح کی نشانیاں بیان کروں، کشف و الہام کی اسلامی حیثیت پر گفتگو کروں، آیت خاتم النبیین کی تفسیر بتاؤں، دور آخرین کی قرآنی آیات اور ان کا مقام واضح کروں، سیاسی و قومی دائرہ اسلام اور روحانی دائرہ اسلام کے بارہ میں ائمہ کا مسلک بتاؤں۔۔ آپ سنجیدہ تو ہوں۔ اور ایک وقت میں ایک بات کریں۔
احمدیت کے معترضین کی عادت ہے کہ ایک وقت میں ایک بات نہیں کرتے ۔ فصلی چوھوں کی طرح ایک بل کے کئی راستے تیار کرتے ہیں کہ ایک جگہ سے جواب ملے تو دوسرا اعتراض اٹھا کر بھاگ جائیں۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

تو جناب میں نے پہلے بھی عرض کیا تھا کہ طنز کرنا ٹھٹھے اڑانا کس کا کام تھا لکھ دوں کیا؟
قرآن کی بات کرتے ہیں تو عورت کی حکمرانی والی پوسٹ پر آپ دیکھ چکے ہیں کہ جو سامنے ہے وہ کوئی دیکھنا ہی نہیں چاہتا.ہم قایانیت کے مخالفین ایک وقت میں ایک بات نہیں کرتے؟
آپ قول سدید سے شروع ہوئے اور ائمہ کے مسلک پر جا ختم ہوئے. میں نے غلام اے قادیانی کی تحریریں لکھیں ہیں.
آپ صرف یہ کہہ دیں کہ یہ اس کی تحریریں نہیں ہیں.
کچھ مزید دیکھنا ھے تو یہاں بھی جائیں چٹی پٹی ہو جائے گی.
http://mqalateraheel.blogspot.com/

آہستہ آہستہ اور بہت کچھ بھی دوں گا.بس آپ آتے رھئے گا.

لطف الا سلام کہا...

بھائی صاحب، یہ تمام اعتراضات، مقالات، میں نے بار ہا دیکھیں ہیں۔ سوال یہ ہے کہ آپ نے کبھی جماعت احمدیہ کے جوابات بھی پڑھے ہیں؟ اگر ایسا ہے تو یہ “خود ہی حاملہ ہوئے“ کا کیا جواب احمدی دیتے ہیں۔ ذرا بتائیں تو سہی۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

قادیانیوں کے جوابات دیکھ کر کیا کروں؟
جن کام ہی جھوٹ ہو.جو دل کہہ دینے والوں کے جوابات کیا دیکھوں.

جھوٹے مالیخولیائی کی ھوائیوں کو ڈائرکٹ دیکھا لیتا ہوں.

DownsShawn کہا...

All people deserve wealthy life time and personal loans or just sba loan would make it better. Just because people's freedom bases on money state.

جاویداقبال کہا...

السلام علیکم ورحمۃ وبرکاتہ،
یاسربھائی، بات توآپ نےسچ کی ہےلیکن ابھی بھی اسلام پرنقب زنی میں ایک اورفرقہ بھی درمےسخنےاپنی خدمات سرانجام دےرہاہےجوکہ شعیہ کےنام سےموسوم ہےجوکہ اسلام کانام تواستعمال کرتاہےلیکن ان کاہرہرعمل اسلام سےباہرہے۔جبکہ ایک بات توآپ بھی جانتےہوں گےکہ ہم جب چھٹی سےدسویں تک اسلامیات پڑھتےتھےتوشعیوں کی اسلامیات بھی علیحدہ تھی کیوں؟ یہ سوال آپ کےذہن میں آیا؟ان کےعقیدہ ہم سےمختلف ہےبلکہ ان کاہرہرعمل ہم سےالگ وہ تقیہ کوایمان کانواں حصہ کہتےہیں وہ گالیوں کومستجب کہتےہیں وغیرہ وغیرہ۔ اللہ تعالی سےدعاہےکہ اللہ تعالی ان کوبھی ہدایت دے۔لیکن آپ لوگوں سےبھی گذارش ہےکہ ان کاپردہ بھی چاک کریں۔

والسلام
جاویداقبال

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

اسلام کے ازلی ابدی عزائم پر نقب زنی کرنے والوں کا تعاقب ضرور ہونا چاھئے۔
جب علما کرام نے متفق ہو کر کسی قسم کا کوئی فتوی جاری نہیں کیا تو ہمیں بھی تعمل اور برداشت کا مظاہرہ کرنا چاھئے۔

Garage Organization کہا...

Thanks for your insight for the great posting. I am glad I have taken the time to see this.

Aileen Chura کہا...

I've been surfing online more than 3 hours today, yet I never found any interesting article like yours. It’s pretty worth enough for me. In my view, if all webmasters and bloggers made good content as you did, the net will be much more useful than ever before.

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.