دنیا

ہر شمع اپنے زعم میں یاں برق طور ھے
ہر کنکری کو ہمسری کوہ نور ھے

عالم میں کبرو عجب کا ہر سو ظہور ھے
دنیائے انکسار جو ہے یاں سے دور ھے

ہم کو تو اس جہان سے شکایت ضرور ھے
دنیائے ھے جس کا نام وہ دارالغرور ھے

شاہوں کواپنی صولت شاہی پہ ھے گھمنڈ
نعمت پہ عیش وعشرت شاہی پہ ھے گھمنڈ

جاہ و حشم پہ دولت شاہی پہ ھے گھمنڈ
طبل و علم پہ شوکت شاہی پہ ھے گھمنڈ

ہر شخص ان کو دیکھ کے کہتا ضرور ھے
دنیا ھے جس کا نام وہ دارالغرور ھے

زاہد کو دیکھیے تو الگ اس کی شان ھے
خلق خدا پہ طعن ھے اطاعت کا مان ھے

حضرت کو زہد خشک پہ کتنا گمان ھے
بگڑا ھوا مزاج سر آسمان ھے

جو اس کے ڈھنگ دیکھ لے کہتا ضرور ھے
دنیا ھے جس کا نام دارالغرور ھے

عالم جو اپنے علم پہ پھولا ہوا نہیں
ہم کو تو اس جہاں میں ابھی تک ملا نہیں

جاہل پہ کون عالم دانا ہنسا نہیں
رونا تو یہ ھے کوئی عجز آشنا نہیں

نشہ شراب علم میں ھے اور ضرور ھے
دنیا ھے جس کا نام وہ دارالغرور ھے

محروم خاکسار جہاں کا یہ حال ھے
ھو اس جہاں سے دور جو فکر مآل ھے

نام ونمود نے جو بچھایا یہ جال ھے
بچنا مرے خیال میں اس سے محال ھے

گر کھل سکی نہ آنکھ تو پھنسنا ضرور ھے
دینا ھے جس کانام وہ دارالغرور ھے
دنیا دنیا Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 6:33 PM Rating: 5

کوئی تبصرے نہیں:

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.