ہم کچھ کچھ ایسے ھی ہیں

ہم لوگوں میں پتہ نہیں کیا خوبی ھے۔کہ ہم ہر دوسرے بندےکی نسبت اپنے آپ کو بہتر اور اچھا سمجھتے ہیں۔جتنی اچھائیاں ہیں۔وہ صرف اور صرف مجھ میں ہیں۔دوسرے میں کوئی برائی نظر نہ آئے تواس بندہ خدا کی برائی کی جستجو رہتی ھے۔
جب برائی دیکھائی دے جاتی ھے تو مطمعین ھوجاتے ھیں۔
ھوں۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔مجھے پہلے ہی پتا تھا اس بندے کا۔

پوری پاکستانی قوم کی حالت عجیب ھے ۔ہر کوئی دوسرے کو برا ثابت کرنے پر تلا ھوا ھے۔
کسی کے خیالات سے اگر متفق نہیں ہیں توبس دشمنی شروع جیسے تیسےھوسکےاختلاف کرنےوالے کو
گھٹیا ثابت کرنے کیلئے کمر کس لی جاتی ھے۔
قوت برداشت یا درگذر کرنے کا جذبہ تلاش گمشدہ ھو چکا۔
معلوم نہیں تھا بھی کہ نہیں۔

ہر کوئی سختی سے اپنے اپنے موقف پر جما ھوا ھے۔
ہر کوئی شکوہ کر رھا ھے۔دوسرے کو اللہ نے کیوں پیدا کیا۔

ایک حکایت کہیں پڑھی تھی۔
موسی علیہ السلام ایک جگہ بیٹھے تھے۔کہ اوپر سے کچھ گرا۔دیکھا تو چھپکلی تھی۔حضرت موسی علیہ السلام نے اللہ تعالی سے شکوہ کیا۔یا اللہ اس چھپکلی کوکیوں پیدا کیا۔یہ کس مرض کی دوا ھے؟
اللہ تعالی نے فرمایا۔اے موسی یہ چھپکلی بھی روزانہ سوال کیا کرتی ھے۔کہ موسی کو کیوں پیدا کیا؟ اس کا کیا فائدہ ھے۔
دوسروں کا تو علم نہیں ہم تو کچھ کچھ ایسے ھی ہیں۔
ہم کچھ کچھ ایسے ھی ہیں ہم کچھ کچھ ایسے ھی ہیں Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 10:01 PM Rating: 5

8 تبصرے:

فکر پاکستان کہا...

کسی سیانے کا قول ہے کہ وہہی بندہ دوسروں کے عیب تلاش کرتا ہے جس کے اپنے اندر عیب ہوتے ہیں ۔۔

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

اللہ کرے ہم سب کو اس بات کا احساس ھوجائے۔

جاویداقبال کہا...

السلام علیکم ورحمۃ وبرکاتہ،
سیانےکہتےہیں کہ کسی طرف انگلی اٹھاؤ گےتواپنی طرف چارانگلیاں ہوں گی اوراسکی طرف ایک۔ اللہ تعالی ہم پررحم کرےاورہمیں صحیح سمجھ و بوجھ عطاء کرے۔ آمین ثم آمین

والسلام
جاویداقبال

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

بجا فرمایا جاوید صاحب۔

DuFFeR - ڈفر کہا...

سر جی پلیز اس ماڈریشن کو تو ختم کریں
تواڈی میربانی

DuFFeR - ڈفر کہا...

مجھے کیوں شک ہو رہا ہے کہ چاہتے ہوئے بھی آپ "کھُل" کے نہیں لکھ سکے؟
:D

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

ڈفر بھائی میں علمی و ادبی شخصیت تو ھوں نہیں۔نہ ہی مولوی فضلو کا مرید ھوں۔کچھ لکھتے وقت احتیاط کرتا ھوں کہ مشکل مشکل سیاستدان والی تحریر نہ لکھوں اور قرآن اور حدیث لکھنے کی کوشش نہ کروں۔وجہ ایک ہی ھے کہ عوامی بندہ عوام دی زبان وچ گل کروں۔

پھپھے کٹنی کہا...

اوپر بڑے سيانے فرما گئے ہيں کافی ہو گيا ہے ميں اتنے سيانوں کے بيچ ميں کيا بولوں

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.