شیر صاحب

کل شام کی بات ھے۔ہم بےغم صاحبہ کے حکم پر کھانا بنا رہے تھے۔کہ ہمیں شیر صاحب کا ٹیلی فو ن آیا۔گفتگو کچھ اس طرح کی تھی۔

ہم ::ہیلو

شیر صاحب ::اسلام علیکم یاسر بہائی میں شیر بول رہا ھوں!

۰
ہم ::وعلیکم السلام،شیر صاحب کیسے یاد فر مایا؟

شیر صاحب :: پہچانا یاسر بہائی؟

ہم::معذرت شیر صاحب نہیں پہچان سکا!!۰

شیر صاحب:: یہ کیا بات ھوئی!!میں آپ سے اپنا تعارف کیسے کرواوں!!؟

ہم::۔۔۔۔۔۔(-!-;;)معافی چاھوں گا شیر صاحب
۔۔۔۔۔

شیر صاحب::آپ ذھن پر زور دو میں دوبارہ فون کروں گا!!ہ

ہم::شیر صاحب پھر بھی کچھ بتائیں تو سہی!!ہ

شیر صاحب ::آپ ذھن پر زور دو میں دوبارہ فون کروں گا!!ہ

ہم::پھر بھی شیر صاحب۔۔۔۔۔۔۔۔

شیر صاحب:: آپ ذھن لڑاوٗ میں دوبارہ فون کروں گا!!

اس کے بعد شیر صاحب نے فون بند کر دیا۔ویسے ہم نے ذاتی قوانین کی پابندی کرتے ھوئے عربی میں جس کو شیر کہتے ھیں اس کو ہم نے اردو میں ترجمہ کر کےشیر لکھا ھے۔ہم ذھن پر کیا زور دیتے ہماری بے غم نے شور مچایا موئے ھانڈی جلادی!!اب کھانے کو کیا ملے گا۔ہم نے کچھ کثیف قسم کے الفاظ سے شیر صاحب کو یاد فرمایا اور بےغم سے کہا چل تینوں لے چلاں ریسٹورنٹ۔شیر صاحب کا حدوداربعہ تو یا د نہیں آیا لیکن خوامخواہ میں ہماری ھانڈی جلی اور جیب بھی ہلکی ھوئی ریسٹورنٹ میں جاکر۔
قصہ مختصر۔ہم نے شیر صاحب کو یاد کرنے کی کو شش نہیں کی سوائے کثیف الفاظ کے۔ذہن پر زور نہ دینے کی تین وجوہات تھیں۔

۱::شیر صاحب بمعہ تشریف خود ہمارے سامنے تشریف فرما نہیں تھے

۲::شیر صاحب کا ٹیلی فون ہمارے موبائیل میں نہیں تھا

۳::ہم نے زندگی میں کبھی بھی شیر کا شکار نہیں کھیلا

شکار ہم نے روس میں ہرن کا ضرور کیا ھے لیکن شیر کا نہیں۔بچپن میں کیونکہ غلیل کا نشانہ لگانے میں یکتا تھے۔معصوم پرندے کافی شکار کئے۔یا پھر جذبہ خدمت خلق کے تحت گلیوں کے کھمبوں کی بتیاں کو نشانہ بنایا۔تاکہ عوام کی بجلی کی بچت ھو اور عوام لوڈ شیڈنگ کےعذاب سے محفوظ رہے۔لیکن ہم نے کبھی بھی شیر یا شیر کی فیملی کا نشانہ نہیں لیا۔
اس لئے محترم شیر صاحب ہم آپ سے نہایت معذرت چاہتے ھیں۔کہ ہمیں آپ کی یا د بالکل نہیں آتی اسی لئے ہم نے آپ کو کال بیک کر نےکی کوشش بھی نہیں کی!! آپ سے گذارش ھے کہ ہمیں معاف رکھیں۔
اللہ ہمارے نشانے سے آپ کو محفوظ رکھے اور ہمیں آپ کی یاد آنے سے!!ہ
شیر صاحب شیر صاحب Reviewed by یاسر خوامخواہ جاپانی on 9:45 PM Rating: 5

5 تبصرے:

پاک لوگ کہا...

یاسر جاپانی لگتا ھے اپ کو جاپان کے مشہور و معروف ٹوکیو بھٹو ھاوس کے بانی ساہی سلیم شیرو نے فون کیا تھا ،

یاسر خوامخواہ جاپانی کہا...

ہاہاہاہا۔۔۔۔۔نہیں وہ شیر نہیں شیرو ھیں۔یہ شیر صاحب کوئی دم والے تھے۔

Jafar کہا...

یہ تو جی کچھ علامتی سی پوسٹ ہے
تو اللہ ہی جانے کون بشر ہے

DuFFeR - ڈفر کہا...

کیا شیر نے اپنے گنجے ہونے کی کوءی نشانی بتائی تھی؟

عامر شہزاد کہا...

آپ بھی میری طرح شیر کو بند کر دیں :)

تقویت یافتہ بذریعہ Blogger.